Zahid is still missing: Bani Baloch

To the
beautiful souls
Of my land,
Who suddenly  plunged
into darkness
Out there in torture cells

To the missing souls
Out there who are dropping
from exhaustion
Or being knocked to the ground

To the heroes
Who conquered death
Like an engulfed flame.

To the brave smile “Zahid Baloch”
Who is a beginning of a new dawn
In the dark brutalities of torture cells.

Welcome to a land, Known Balochistan,where no one is spared, The sick, the elderly, childern,infants, and pregnant women, all are marched to their death or enforced to live miserable lives in the devestating torture cells.

Terrible things are happening in over all region of Balochistan. At any time of night and day, raids are being attempted,  helpless people are being dragged out of their homes, houses are robbed, families are torn apart. Men women and childern are seperated. Childern come home from school to find that their Father is disappeared and their family is now shattered.

Every one is scared in Balochistan, No one knows who will be the next victim. Every night and day hundreds of forces enters in the city, seize the area and start search operation. Hundreds of Fighting jets are ready for air shelling , air strikes and sowing their bombs on Baloch Soil.

Every hour hundreds, or may be even more people are being disappeared or killed. No one can keep out of the conflict, the Entire Balochistan is at war.

Away from the turmoil, I get frightened myself when I think of people who are now at the mercy of the cruellest monsters ever to stalk the Earth, and all because they are Baloch?
Well, this is so gruesome and dreadful, that I can’t get them out of my head. My head begins to reel since last 4 years, when March comes but he doesn’t.

Zahid Baloch, former chairman of Baloch Students Organization (BSO Azad) he was  abducted on 18 March 2014,  uptil now his wereabouts are unknown. The period of prolong four years is not easy for any family. But Zar Jan wife of Zahid Baloch along with her kids are passing their lives with a gnawing ache inside their heart in the most horrendous time of their lives in the absence of Zahid Baloch.

Its Harrowing,
Heartbreaking,
And Extremely Emotional,
There are many moments
I had to take deep breaths

Whilst imagining horrors,
Air  is often fill in tensions,
Air blow fast and fast,
Making the tree leaves dance,
With each tune of dancing leaves,
Air Mourns thousand of times,
For the beginning of a new dawn (Zahid Baloch)

Today, Zahid is not among us, but I know, he is spreading his light to encounter the dusk in torture cells..




براہوئی شاعری نا جاچ

وحید زہیر:
براہوئی شاعری نا بسونی اُست اثری،علم آختہ ہی آن بیدس اونا زمانہ غاتے آن واخب مننگ،منہ شاعر نا کلام ردوم نااندازہ خلنگ مر یک قدرت انسان تن او ار ہر گڑاٹی خلکن او تر ندی تخانے۔ پھل و پت اَنا دروشم او کا ریم ءِ جتا جتا کرینے انسان آتے ٹی  مون،پہون،مندر،بھلن،عالم جائل نا فرق ہس ضرور تخانے وے خن،خف، دو، نت،اُست اَنا مننگ ءِ اونا اسے وڑ گرج اَنا بنیاد آتے آتخا نے۔
سادار آتے جتاجتا رنگ و دروشم تننگانے۔چک او جو جیک آتا و ڑ او نسل آک جتاوٗ۔انسان بیرہ انسانی شرف تخک،ہراتم او شرف آن تمک گڑا او سادار آتا وڑ نا نمو نہ اس جو ڑ مریک۔دا ادب و شاعری ءِ کہ بندغ ءِ تینے تینٹ پہہ مننگ آن خٹر ک کیک۔ شعر و نظم آتے ٹی اونا جوزہ او خو اہنداری تے پاش کننگیک۔ براہوئی شاعری ٹی مروکا تخلیق و شعر تفنگ نا مسخت آک دنیا نا ہر جا گہ نا ہر زبان نا پاور کا تے امبار اسٹ مسونو۔ اوہرا انسان آتے ٹی شعرو ادب او فنون لطیفہ نا میراث و مڈ ی مریک او بولی پا ننگپسہ او زبان پا ننگرہ۔
اینو براہوئی پوسکنا شاعری نا پوسکنا وخت داری نا شاعرات
 ام اندا کاروان نا مسافر آتے تون گون تمیسا ؤ”  (1)
داہیت ء ِ ام ننے منوئی ء ِ کہ برہوئی زبان ٹی شاعری باز مسونے مگہ اوفتا
شعراک نوشتہ متہ نو، براہوئی زبان او فتا بے بہا غا مڈی آن بے بشخ سلیس ”  (2)
دنیا ٹی ہمو زبان آک گو ہنگرہ ہراتے ٹی تخلیقی لائخی مف یا او نا پاروکاک تخلیقی لائخی آن نریر یا اوڑ کن اُست پسندی درشان کپس۔
براہوئی شاعری نا تخلیقی گیشتری او نا بنوک و پاروکا تے زیات کننگ اٹی بھلوکڑ د ہس تینالا ئخی تے نشان تسونے ای دانہ پہ دانہ تن اوار براہوئی نا چندی شعرآتے ایلو زبان اسینا پاروکا تا باہ غان بنگو نٹ دا زبان
ناشر فمندی ءِ کہ بندغ ہس پین زبان اسے تینا زبان خیال کے۔ بھلا زبان آتا بھلن جوڑ مننگ نا بنیادی
سوب ہندادے کہ ہمو زبان کل کنِ ہنین،گچین او ھیل کننگ تہ اسے نہ اسے گرج اسکین المی مسونے۔ یا علمی
بنیاد آ انسان آتا جوزہ او زند اَنا جو ان وڑ اٹ سرو کی ءِ کرینے۔ اینو اسکان نا براہوئی شاعری پوڑی بہ پوڑی ہرا
وڑ اٹ برزانانے دانا چنکو جا چ ہس النگ آن او نا بھلو ن مننگ نا لائخی نا گرج آتے آن بندغ واخب مریک۔
 زبان آتا گیشتری زبان آتے سرکاری قومی او علمی زبان نا پوڑی آسلفیک۔براہوئی علمی زبان ہسے اودے۔ ادبی اومیراث ہس ارے،ہر بشخ نا فنکا ر آتا نمائندگی نا حق خلاصی ٹی آختہ ءِ داڑ کنِ اونا علم و
ادب نا خواری کش آتا چائنداری او شرف بخشی نا حق اینو نا طالبعلم،پٹ وپول کرو کا تا ذمہ واری ءِ۔دا رد  اٹ ای گڑاس تینا وخت نا نما ئندہ شا عر آتا لڑ ہس گیچین کر نیو ٹ،اوفتا درستی راستی او زمانہ اوفتا کڑداو لا ئخی نا بے مٹ او تاریخ ہس درشان کیک۔
اند سوگوہی او نا تخلیقی عمل ٹی علامت آک لڑی سے امبار شعرآتے ٹی خُلنگانو۔ محبوب نا زلف آتے زامرتُن تشبیہ تننگ جوڑتے گلاب نا خیسُنی۔ بدحالی ء ِ پن ریچ نا موسم،خُلیس ء ِ تارمہ انگا نن انابیم ءِ تشبیہ او استعارہ کن استعمال کننگانے۔ گڑاس شاعر اوفتا دور شعری نمونہ غاک۔
عبدالمجید چوتوئی
غزل نا بناھی آ دروشم ء ِ  خوڑتی اٹ ہننگے تو داپھُل اسیامبارتینا رنگ آتے تنُ پک باہ ملنگ نا زمانہ ء ِ مولانا عبدالمجید چوتوئی نا شاعر ی سفا اوسفتی خننگک۔حالانکہ اوفتا تعلیم مدرسہ نا ہس۔ مذہبی ادب ٹی اونا ہم زمانہ ٹی شاعر ادیب آک تیناکماش آتا علم ء ِ مستیُ دننگٹی اسرُہ۔ ولے دا پاننگ مریک کہ مذہب نا ادبی معیار بندغ نا بندغی تنُ گنڈوک ہس۔ او علم نا کلے وسیلہ غاک اووختٹی چائنداری تخارہ۔اوفتا کوپہ غا انگریز مشنری نا تینا نف کن گمراھی نا بڈ ہم تخوک اسکہ۔ہراڑکن اوفک تینا قلم اٹ مخلوق نا علم و فکر ٹی ساڑی آ وسیلہ آتے اٹ  بیداری اترنگ تُن اوار تینا دودربیدہ او ڈغار نا رکھ کن علمی کاریم کریر۔ہرانا او وخت ٹی زیات گرج اسکہ۔
یقینا جنگ انا زمانہ ٹی عشق مریک مہر مفک اوڑان گڈ امن او ایمنی شاد کامی ہس خن خلیک۔ عبدالمجید چوتوئی نا زمانہ نا جہاد جائلی آن پیشن ہس، اندا خاطران ہرگڑا ئے بنیاد پرستی پارہ۔ اوڑان نابلد ہس، اندا گڑا ثابت کیک روشن فکر آ ملا بلوچ راج انا مثالی آ وصف ہس ارا اینو ام تینا سفر ء برجا تخانے، اگہ داہیتے جئی آسیاست آن کشیہ اننگے گڑا مدرسہ نا پوسکنا علم وادب، شعر و سخن نا سما تمک۔ راج ہس کہ تینا مہر انا فلسفہ غان سرجم مر ے گڑا اونا عالم ام عبدالمجید چوتوئی امبار غزل ء ِ پانادٹی تخِک، داہیت آتا روشنائی ٹی اوفک غزل نا پارہ غا شعری سفر ء ِ برجا تخار۔اوفتا شاعری ٹی علامت۔ تشبیہ۔ استعارہ۔ او بجازیک ننے ملرہ دنکہ پائک۔
“نا  جوڑک شرابی آ کلکاک گلابی آ
او خلکر کنے خنجر نی مرکہ کنا مرض ءِ
ہرُ رب آہے دلبر نی مرکہ کنا مرض ءِ
نا  خنک  خماری آ خیسنُ اناری آ  “
قیوم بیدار نوشتہ کیک۔ چوتوئی غزل نا صنف
 ءِ مونی دننگ ٹی براہوئی ادب تُن
 درستی راستی کرفنگ نا اعزاز ے تخک۔ (3)
نور محمد پرکانی نا رداٹ 1905ء ٹی اوفتا
 کتاب مفرح القلوب نعت المحبوب المعروف
 چھاپ مسونے۔مکتبہ درخانی نا بست و بند اٹ
 چھاپ مروکا دا کتاب ٹی 580شعر ء ُ
۔ دا براہوئی ٹی غزلیات نا اولیکو کتابے۔
ہراٹی ملاُ نا نزوری تے ہم بیان کننگا نے۔ (4)
داڑان گڈ نن پاننگ کینہ کہ براہوئی غزل نا روایت متکُن ضرور ء ِ ولے باقاعدہ برجا سلے تہ نے۔دانا سوب آک سیاسی آن زیات راجی مننگ کیرہ۔ انتے کہ جمالیاتی شعری عمل ء ِ زیات دوست تخننگ تہ نے۔خاص وڑاٹ شاری علاقہ غاتے ٹی اندن کہ شادی و مرک نا رواج آ تے سختی تُن اوار کننگانے۔ ہندا وڑ پین چندی نزوریک او بے ڈول آرواج آک مونا بسُر ہرانا رداٹ عبدالمجید چوتوئی ملاُ تے آ شعری زبان ٹی تنقید کرینے۔انتے کہ دانا مقابلہ ٹی پاوالی آ زند زیات راجی وڑاٹ پک او بسُن مسونے۔ او ڑے شعری روایت جمالیاتی بشخ تُن سوگوُ خنگنک پاوالی آزندعلمی وڑاٹ نزورآ ملاُ نا نزوری تا گواچی متہ نے۔تینا ایمان و عمل ٹی داخہ بسُن مسونے کہ مجالے مہمان اونا گدان ءِ بینگون جپے کائے۔۔ اگہ اعتبار او اعتماد ء ِ کس ہننگ خوائے تو پاوالی زند اونا جوانو نمونہ اسے۔
 خلق آتیٹی درگہ نا رواج الو۔ داخاطران کہ دزوڈونگ اوبیمان آتا خلیُس متہ نے۔ دننگا علاقہ خاہوت آتے مسونے خاہوت آتا ٹی ہراتم اسکان پیشن نا عنصر اوار تمپک تو خاہوت ہر وڑاٹ تینا دودو ربیدہ او رواج آتا پابند مریک۔ اگہ دا وڑ براہوئی نا شعری دبستان آتا جاچ ء ِ ہلنگے تو ننے پاوالی او شاری دبستان آک دو بریرہ۔
ایہن ہم ہراڑے ہراڑے شون رواج ہرفک اوڑے جوانی تُن اوار گندہی ہم کاٹم ہرفک۔ انتے کہ گندہی داخاطران ہم زور آور خنگک کہ شاری زند تینا تضاد (چک و تاڑ۔ قبول او بے قبولی) نا سوب آتے آن ہڑوجنجال آتا گواچی مریک۔ہرانا مثال اینو ہم نے شک او مون کننگ نا شکل اٹ ہرے۔داسے مرغنو
جتاو بحث اسے دادے ای داوڑ گونڈ کیوہ کہ اینو نا بندغ ء ِ شون ء ِ قبول کے تا بے علمی نا جن آتے کرار ملے۔دا زمانہ نا رفتارناضرورت ءِ اوزند انا پوسکنا علامت آتا حقیقت پاش ءِ دافتے آن مون ہڑسنگ بندغ کن خوک آن کم اف۔
ڈاکٹر عبدالرحمن براہوئی نا کتاب براہوئی زبان و
 ادب کی مختصر تاریخ آن پنی آ ملاُ شاعر آتا
گڑاس کلام آن نمونہ ہس کہ اوفتے ٹی شعر
ادب نا شعور نا اندازہ ءِ نم تینٹ خلورے۔
” مولانا محمد عمر دین پوری 1982ء ٹی مستونگ
ٹی ودی مس۔ 48کتاب نوشتہ کرے۔
 اونا کلان مشہور آ کتاب سودا ئے خام ءِ
 ہرا 1334ھ ٹی شینک مس۔ ارٹمیکو
 وار 1335ھ ٹی چھاپ مس۔(5)
 داغزل آتا مجموعہ اسے۔ اونا شاعری نا نمونہ اسے ہبو۔
“مجبوب  جانی نارندٹ بروکا
در ڈ  و غما  تا زیادہ  کروکا
داغ  ءِ  جتائی نا تخپہ کنے آ
کپہ  کنے خوا ر ہم سن تا نیاما”
” ا  و شام نا   بروکا ا  ستے کنا دریس
احوال ء ِ بندہ نا حورو پری کے دیس”
جتائی نا داغ۔ حور و پری نا زاٹ بننگ۔ محبوب جانی داوڑ نا علامت آتے ہمو وخت آن کاریم اٹی اترنگانے۔اگر ہیت عبدالمجیدچوتوئی نا منگٹی اسکہ تو اوٹی ملا تاہیت مس پاننگ نا مسخت دا دے کہ او تما ملا عالم ءِ پاریرہ ولے مدان مدان آعالم آتے آن بیدس داپن دین اناپن آریفوک ءُ، مجبور آ تے آن فائدہ ارفوک،مذہب نا پنٹ خلیفوک اوبے علم آتے تن لچا ہراتے صو فی شا عر آک ہم تینا شعر تے ٹی ملا مت کر ینو۔
ملا محمد حسن بدوزئی
ہچو ڈغار او بندغ اسے نا فطری آعشق توننگ مفک، اندا سوب ءِ شوآن آن الیس بادشاہ او عالم آتے سکان داکسر نا سفرٹی اسے وڑنا مسافر خنگرہ۔بہادرشاہ ظفر امبار ننا بادشاہ عوامی متہ نے کہ عشق انا درشانی ء ِ کریسُس۔اندا خاطران ہراڑے بادشاک عوامی متہ نو اوڑے اوفتے ان یا اوفتا اولیاد ان ادب نا گندبتہ نے، آں اوڑے دربارٹی ساڑی آ بندغ آک تینا درشانی کن وسیلہ پٹانو، ملامحمد حسن ام ہمو بندغ آتے آنے ہرا عشق نا علمی وسیلہ غان واخب ہس
“اوفتا تعلق بنگلزئی قبیلہ نا شاخ بدوزئی
 آن اسکہ 179ء ٹی اوفتا پیرہ علی خان
میر نصیر خان نوری نا دربار تُن گنڈوک
 ہس اوفتا خڑکی فارسی ادب نا خوانوک
او پہہُ مروکا حقی آ عالم آتے آن ہس اندا
خاطران اوفتا کلام آن فارسی نا رنگ پاش ء ِ”
بلوچستان ٹی بلوچی و براہوئی شعرو ادب نا اثر آک کلان زیات ء ُ، انتے کہ اسے زمانہ اسکان تعلیم نا وسیلہ بیرہ فارسی زبان مسونے مولوی محمد عمر پڑنگ آبادی اسکان نثر و نظم ٹی دانا اثراک پاشو۔گڑا دا امہ مننگ کیک کہ فارسی نا شعر ی علامت آتے آن اوفک چائنداری مفس۔ ملامحمد حسن نا شعر اسے کہ۔
“او شام نا بروکا استے کنا دریس
احوال ء ِ بندہ نا حور و پری کے دیس (6)
اندا شعری روایت ملامحمد حسن براہوئی ء ِ اردو زبان آن ام خڑک کیک۔ ہرااودے بلوچستان ٹی اردو شاعری نا سروک آتا منصب آ سلے فینے۔براہوئی شاعری کن ماحول نا خوندی نہ مننگ نا گڑاس پالو تا نزوری نا سوب آن چندی کماش شاعر آتا کروکا کاریم تے آ پردہ
شاغِک۔ دامننگ کپک کہ ہراشاعر نامنہ شعر و دیوان آتا درک ایلو زبان آتے ٹی ملے او نا تینا
زبان نا شاعری داخہ در کم مرے۔ ملامحمد حسن آ زیات کاریم اوفتا علمی منصب ء ِ پاش کننگ نا بھلو خواست اسے۔
حوالہ غاک
1۔ پیر محمد زبیرانی” براہوئی شاعری”ماہتاک اولس کوئٹہ  تاک  نومبر، دسمبر  پنہ  97
2۔ نادر قمبرانی”براہوئی شاعری “ماہتاک اولس کوئٹہ  تاک  جنوری    پنہ  43
3۔ عبدالقیوم بیدار “عبدالمجید چوتوئی شخصیت و شاعری” براہوئی ادبی سوسائٹی کوئٹہ پنہ  3
4۔ نور پرکاڑی”براہوئی ادب”مسٹیمکو وار  براہوئی اکیڈمی کوئٹہ  پنہ  90
5۔ ڈاکٹر عبدالرحمن براہوئی ”  قدیم براہوئی شعراء ”   ادارہ ادب بلوچستان کوئٹہ    پنہ  13
6۔ عبدالقیو م بیدار “براہوئی نسائی ادب کا تخلیقی مطالعہ”براہوئی اکیڈمی کوئٹہ  پنہ  69



چَہ چِتگیں رودپترءَ

تاک ءِ پُشتءَ تاکاں لیٹینان اَت ءُُ ھمک تاک آئیءِ جیڑگاں گیش کنان اَت، بلے انگت بازیں تاکے آئی ءَ لیٹینگی اَت کہ لیٹینت یئِ  نہ کت!!!
آئی ءَ تاکے لیٹینت: یک مردے، اُستایے ءِ گورءَ نشتگ۔ زھم ءُُ اِسپر ٹَپّائینگ ءَ اِنت، بلے دست یئِ  آئی ءِ لوگانی نیمگءَ شھار داتگ اَنت۔
”اِے وَ منی بازار ءِ اَکس اِنت بلے اے تاک ءِ سرءَ کَے ءَ جوڑ کتگ!!؟“
آئی ءَ دگہ تاکے لیٹینت: مردے جنگ ءَ اِنت، لھتے نوکی چَہ واب ءَ پادایگ ءِ جُھدءَ اِنت۔
سیمی تاک یئِ  لیٹینت: دو مردم جنگءَ اِنت، لھتے نشتگ ءُُ تماشا چارگ ءَ اِنت۔
پدءَ چارمی تاک یئِ  لیٹینت: یکے کُشگ بوتگ ءُُ دومی آئی ءِ سرون ءَ نشتگ ءُُ گریوگ ءَ اِنت۔ مردم درست وتی لوگانی تہءَ سَر کَشّگ ءَ اَنت۔
مردکار پاد اَتک، ڈَنّ ءَ دَراَتک ءُُ چار اِت یئِ پرچاکہ ھما تاک ءِ سرءِ جوڑ کتگیں اَکس آئی ءِ ھمساھگانی لوگانی رَنگ ءَ اِت اَنت۔
”یا….!! ادءَ انگت چُشیں ھبر نیست ءُُ گونڈو ھم لئیب ءَ اَنت، بلے اَکس کَشّءَ باریں پرچا…..!!؟“
گومے جیڑگ ءَ، پدءَ اَتک ءُُ تاکے لیٹینت یئِ: مردم جنگءَ اِت اَنت۔ ھمیشاں لھتے جَنَگ بوتگ اَت ءُُ لھتے ھمے جونانی سرءَ گریوگ ءَ اَت۔
اے رَندی آ گُڑ اِت، پرچاکہ ندارگ اَنچوش اَت گوش ئے زاناں بُت کَشّءَ آئی ءِ میتگءِ دَمک ءُُ مردمانی بُت جوڑ کتگ اَنت۔
ڈَنّ ءَ دَر اَتک: ”دِلوؔ، کھیرؔ، مُریؔ، شَدریؔ، او! بانڈیؔ؟“
درستاں یک یک ءَ پَسّو دات: ”جی واجہ!… ھَیر اِنت؟“
پَسّو یئِ نہ دات ءُُ پدءَ لوگ ءَ اَتک ءُُ تاکے لیٹینت یئِ: لھتے جنین برھنگ کنگ بوتگ ءُُ ھمیشاں لَٹ دیگ بوگ ءَ اِنت۔
ھمے دراھیں اَکس آئی ءِ مات، گھار ءُُ جن ئیگ اِت اَنت۔ گبیرّگ ءَ چُلّ ءَ شت، پدءَ گھار ءِ لوگءَ، ھمے وڑءَ تچانی ءَ ڈگار ءَ مات ءِ ھال ءِ گِرگءَ شت۔ بلے اے درست سلامت اِت اَنت۔
نوں آئی ءِ جیڑگ گیش بوان اِت اَنت، ءُُ اے ھبر پرائی ءَ دردے اَت کہ ھمے بُت کَشّ کَے بوتگ کہ دراھیں اَکس یئِ  منی کَس ءُُ ازیزانی جوڑ کتگ اَنت یئِ۔؟ مستریں ھیرانی ھبر پہ آئی ءَ ایش اَت کہ آئیءِ سرجمیں بازار ءَ بُت کَشّ نیست ءُُ نبوتگ!!
سگریٹے روک کت یئِ: ”باریں ھمے بُت کَشّ کَے اِنت!!؟“
پدءَ ھمے تاک یئِ زُرت اَنت ءُُ کوہ ءِ بُن ءَ شت ءُُ نشت۔
تاکے لیٹینت یئِ: گُڑ اِت…!! ھمے کوہ ءِ بُن ءَ لھتے جون اَنت کپتگ اَنت، بلے ایشانی سرءَ موتک آروک آئیءِ کسانی ءِ سنگت اَنت۔
آئی ءِ گیشتریں گُڑَگ ھمیش اَت کہ سھتے پیسر ھمے تاک ءِ سرءَ دو مردم جنگءَ اَت، لھتے نشتگ ءُُ تماشا چارگ ءَ اَت، گڑا اِے اَکس ھمے تاک ءِ سرءَ چِتو ءُُ چے پیم بدل بوت اَنت؟ دومی ایش کہ اے اَکس اوں تاجگ اَنت، پرچا کہ رنگ آئیءِ دستءَ لِچّگءَ اِت اَنت۔ نوں آئی ءِ ٹیلگ چَہ ترس ءَ دَر اَتک اَنت۔
آئی ءِ دل ترکگ ءَ اَت ءُُ لرزاں لرزاں اُستا ءِ گورءَ اَتک: ”من ءَ یک شرّیں زھمے بہ جن ءُُ بدئے کہ مروچاں من ءَ وڑ وڑیں اَکس گِندگ بوگ ءَ اِنت کہ من لوٹاں وتءَ بہ پھریزاں۔“
اُستا ءَ مِرمرانکیں کندگے جت ءُُ گوشت: ”تو اَنوں کجا روگءَ ئے؟“
”ڈگار ءِ نیمگءَ دَمے سارت کناں، بلے چَہ منی واتری ءَ پیسر زھم ءَ ھم تیار کن ءُُ دیم دئے…!!“
اُودءَ کھیرے ءِ بُن ءَ نشت۔ سھتے دَم ءِ سارت کنگ ءَ پد، تاکے لیٹینت یئِ: ”یا….!! اے وَ ھمے کھیر اِنت ءُُ جھل ءِ نندوکیں مردم من آں، بلے اے اکس ءِ تہءَ منی چمّاں تیر وارتگ…!!!“
آئی ءِ جان ءَ درھگے کَپت، نُکّ یئِ ھُشک بوت۔ سھتے پیش ھمے تاک ءِ سرءَ دگہ اَکس اِت اَنت۔ بیرگءَ آئی ءَ وتی دستے چَمّانی نیمگ ءَ بُرت، ھون ءَ پنژار بَست…..!! آئی ءَ لوٹ اِت کہ تاکاں بہ لیٹین اِیت، ءُُ ندارگاں وتی ھَکّ ءَ بہ مَٹّائیت بلے آئی ءِ تھنائی ءُُ بے وَسی ءَ آ وار نہ دات…..!!!



شونگال


:ادارہ
اے گپ تچک اِنت کہ مرچیگیں زمانگ ءَ راجاں ایر دست کنگ ءِ واستہ تھنا زور ءُ زوراکی بس نہ اِنت، ایشی ءَ ھوار ایردستیں راجانی زبان، دود ءُ ربیدگ ءُ چاگردی اسٹرکچرءَ بدل کنگءُ آھانی زمین ءِ ھد ءُ سیمسرانی پْرشت ءُ پْروش ءُ بدلیءُ سدلی ءِ وڑیں پندل سازگ بنت۔ دنیا ءِ بازیں ملکاں ایشیءِدرور است کہ ایردستیں راجانی زبانانی سرءَ بندش جنئگ بیتگ۔ یک درورے ترکی اِنت کہ اودءَ یک وھدے کردانی زبان ءِ سرءَ پابندی بوتگ۔ یک قومے ءِ کہ زبان گار کنگ بہ بیت گڈا آ راج وتی پجار ءَ گار کنت۔ مرچی ما گندگ ءَ ایں کہ بلوچی ءُ براھوائی زبان ءِ سرءَ نہ ایوک ءَ غیر اعلانیہ پابندی جنئگ بوتگ، بلکیں زبانانی فرق ءِ نام ءَ بلوچ ءَ پروش دیگءِ نیتءَ بھر ءُ بانگ ءِ پالیسی ھم سازگ بوھگ ءَ اِنت۔ دیر اِنت کہ پاکستان اے پروپگنڈہءَ تالان کنگءِ جھدءَ اِنت کہ براھوئی ءُ بلوچی یکیں قوم ءِ زبان نہ اَنت۔ دو جتائیں راج اَنت۔ بلئے اے یک راجدپتری راستی یے کہ بلوچی ءُ براھوائی ءَ گپ جنوکیں مردم ھزاراں سالاں چہ یکیں زمین ءِ واھند اَنت، ءُ پہ ھمے زمین ءَ ھواری ءَ وتی ساہ ءُ سر اِش ندْر کتگ اَنت۔ ھمے رنگءَ جدگالی ءُ سرائیکی زباناں گپ جنوکیں مردماں پاکستان چہ بلوچ راج ءَ سندگ لوٹیت۔
قومانی بھر ءُ بانگ کنگ ءِ پندل سازگ ھم جنگ ءِ بھرے۔ بلوچ راج ءَ را اے گپّ الّم ءَ سرپد بوھگی اِنت کہ پاکستان ءِ رسانکدر ءُ زانتکار بلوچ راجدپتر ءُ بلوچ زمین ءِ ھد ءُ سیمسراں دروگیں رنگے ءَ پیش دار اَنت۔ داں کہ بلوچ راج وت واجہ نہ بوتگ پاکستانءِ زوراکی بلوچ ءِ ھلاپ ءَ ھمے رنگ ءَ برجاہ بیت۔
بلوچ دانشور ءُ زانتکار باید اِنت کہ چہ مزنیں تاوانےءَ پیش اے پندلانی پدّر کنگ ءِ جُھدءَ بہ کن اَنت، چیا کہ آپ اگاں چہ سرءَ گوْست پدا دستاں سرءَ کنگءَ پائدگ نیست۔ مرچی بلوچ مھلوک تیار اِنت، انوگیں آجوئی جنگ ءَ مھلوک ءِ تہءَ اے زانت ءُ آگھی آؤرتگ کہ مھلوکءِ گیشتریں بھر پاکستان ءِ نیمگ ءَ چہ تالان بوتگیں گپّاں پندل سرپد بیت، بلے ریاستی میڈیا رنگے نہ رنگے ءَ مردمانی تہ ءَ ھمے بھرءُ بانگ ءَ پیداک کنگ ءَ دلگوش اِنت۔ زوراکیں دژمن ءِ دیم ءَ یک گروھے داشت نہ کنت۔ دانکہ مھلوک ءِ تہ ءَ اتکگیں آگاھی یک دلجمیں پلیٹ فارمے ءِ کمکءَ چہ متحرک کنگ مہ بیت۔
بی ایس او آزاد ءَ مدام ھمے گپّ ءِ سرءَ زور داتگ کہ بلوچ نبشتہ کار، زانتکار ءُ کواس، وتی کردءَ پارٹی پلیٹ فارمءِ سر ءَ دیمءَ بہ بر اَنت۔ پرچا کہ بلوچءَ چہ گلامیءُ زوراکیءَ رکینوک تھنا بلوچءِ راجی گل اَنت۔ بلوچ نبشتہ کارانی بنکی ذمہ واری اِنت کہ راجی جُنز ءُ راجی پجار ءِ دیم ءَ استیں جیڑھاں مھلوکءِ دیم ءَ آرگ ءِ واستہ وتی کردءَ پیلو بہ کن اَنت۔




شہید شکور بلوچ

نوشت۔ عابد جان بلوچ

بلوچستان اٹ قومی جہد کن مچا دھرتی نا اسے دُنو علاقہ، کونہ ئس سلتانے کہ ہراڑے دا دھرتی نا بہادر سینا دتر وہیتنے۔ مچا دھرتی نا ہر کونہ غان بہادر آ سپاہیک، پیر ورنا، نیاڑی نرینہ، چنا بھلا، امیر و غریب قومی جہد اٹ بشخ الیسہ ہر وڑنا قربانی تسونے و تننگو۔دھرتی نا ہر علاقہ ٹی شہید آتا دتر وہانے۔ لاش آتا خوشبو سر مسونے، سرمچار آتا کوکار بے چینی ودی کرینے، زانتکار آتا لوز آک بیداری ودی کرینو، شاعر آتا شعر آک جوزہ ودی کرینو۔ بلوچ قوم اسے تاریخی او جہد ئس برجا تخیسہ اندُنو قربانی تا سمندر ئس تالان کرینو ہراتا مثال قربانی تا مثال دنیا نا تاریخ اٹ بھاز کم ملّیک۔

بی ایس او آزاد نا باشعور آ ورناک اسے ترندو جوزہ سیٹی تینا بنیادی آ حق آتیکن سیاسی ڈول اٹ کوکار کننگو۔ اندا کوکار نا جرم اٹ کہی ورنا تے قوضہ گیر ریاست نا بزدل آ جلہو آتیٹ شہید کریر و کہی تے بے گواہ کرسہ تینا ٹارچر سیل آتیٹی انسانیت نا حد آن پار اننگا خلنگ و تشدد نا گواچی کننگ او۔

شہید شکور بلوچ ننا خوانندہ گل نا ہمو ورنا ئس ہراکے ننے آن مسے سال مست جتا مس ولے اونا نظریہ، فکر و جہد داسکان بی ایس او آزاد نا ورناتیٹی سلوکے، یقینا دا جہد مزل نا سرمننگ اسکان برجا سلیک۔ 18اگست 2013ء نا بد بخت اننگا دے نا دا ورنا ءِ جسمانی حوالہ اٹ ننے آن جتا کرے۔ بزدل ریاست نا فوجیک دا ورنا نا نظریہ فکر ءِ تینکن خاخر ئس سرپد مریسہ دا ورنا نا کمزور آ جون آ سم کاری کریسہ شہید کریر ولے دا تو کائنائی او حقیقت ئسے کہ اسے نظریہ فکر سینا مسافر ہچ دنیا نا تاریخ آن پیش تمپک او اسے زندہ او پن ئس کٹک، یقینا اینو شہید شکور بلوچ ءِ مسے سال نا جتائی آن پد ہم اونا پن داسکان بلوچ قوم نا تاریخ اٹ زندہ ءِ۔ شہید شکور دنیا ءِ دا نشان تس کہ دا دھرتی نا ورناک ہر وڑ نا قربانی تننگ کن تیار او ولے دشمن ریاست نا تینا سرزمین آ قوٖضہ ءِ سگیپاسہ۔ شہید شکور شہادت ءِ قبول کرے ولے تینا دھرتی نا آجوئی نا جہد آن اسے انچ ئس ہم پد متو۔ اگست نا تُو ئس غیر فطری ریاست نا وجودیت نا تاریخ ہراڑے مچا بلوچستان اٹ سوگ نا دے اٹ یات مننگ ئس ہموڑے ریاست نا فوجیک ہڑی آ کچک آنبار مچا بلوچسان اٹ اسے خونی او آپریشن ئس برجا تخا۔ 18اگست 2013ء نا دے شال اٹ سریاب روڈ آ ریاست نا فوجیک دا باشعور آ ورنا ءِ شہید کریسہ اندا سمجھا کہ بس اسے باشعور ئس بی ایس او آزاد نا ورنا تا نیام آن جتا مس، داسہ دا گل تینا جہد آن پدی مریک ولے مچا دنیا دا حقیقت آن واقف مس کہ قربانیک دا جہد ءِ پین ترند کریرہ۔ ہر تحریک و جہد اٹ ورنا تا دتر شولننگانے ہمو تحریک ضرور سرسوب مسونے۔

بی ایس او آزاد نا زار آ ورناک شہید مسور و ہزار آک داسکان دشمن نا ٹارچر سیل آتیٹی انسانیت سوز اذیت آتے سہیسہ دشمن ءِ ہر پارہ غان بے سرسوب کرینو۔ داسہ دشمن جعلی مقابلہ غاتیٹی ورناتے شہید کننگ ءِ۔ دشمن تینا پر گندہ اننگا پالیسی تے بلوچ قوم آ آزمائفے لوے بلوچستان نا غیرت مند نڈر آ اولاد آک ہر قربانی ءِ خوشی ٹی قبول کریر ولے دشمن نا قوضہ گیری ءِ منیتانو۔

شہید شکور بلوچ بلوچستان نا علاقہ مستونگ اٹ ہمو دور اٹ خنتے پٹیا ہرا وخت آ غلامی نا زند و بلوچ قوم نا بے وسی، ایڑ ایلم و لمہ غاتا عزت آتا رکھ اکن جہد برجا ئس۔ شہید ہرا وخت تینا حقیقی آ علم و تعلیم آن شعور دوئی کرے و ہمو وخت آن اونا زند نا آسودگی، آرام نا ساعت آک ایسر کرسہ ہمو وخت آن دھرتی بلوچستان نا جہد کروکا ورنا تا گل اٹ اوار مس۔ بی ایس او آزاد نا پلیٹ فارم آ دھرتی نا جہد ءِ برجا کرے۔ ورناتا اسے بھلو گل ئسے باشعور کرسہ بی ایس او آزاد نا پلیٹ فارم آ جہد ءِ برجا تخننگ کن اوار کرے۔ بلوچستان یونیورسٹی ٹی ورنا تا سرکل اٹی تینا بھلا سوچ و فکری آ لوز آتے تالان کرسہ ورناتے بروکا وخت  کن پوسکنو پالیسی جوڑ کننگ، تعلیمی میدان اٹ تینا جہد ءِ مونی دننگ و تینا گل بی ایس او آزاد نا کلہو ءِ مچا بلوچستان نا ہر ورنا خوانندہ اسکان سر کننگ کن پاریکہ۔ دنیا نا ایلو تحریک آتیٹی ورنا خوانندہ گل آتا کڑدار و تاریخ ءِ مچا ورنا تا مون آ تالان کریکہ۔

شہید شکور بلوچ ورنا تے ہمو کسر نا پارے ہراکے انسان ءِ اونا جتائی آن پد ہم زند سلفیک۔ دھرتی نا دا ورنا نا قربانی دشمن ءِ ہمو خلیسے تس ہراڑان ریاست داسکان دا گل نا ہر ورنا غان خوف کننگ ءِ۔ دا سال اٹ ہم بی ایس او نا کہی ورناک دشمن ریاست نا بزدل آ جلہو آتیان شہادت نا جام ءِ نوش کریر۔ ولے بی ایس او آزاد نا ورنا سوغند ارفینو کہ زند نا آخری کو ساہ اسکان قوضہ گیر تون قلم ناکمک و تینا کوکار نا جنگ ءِ برجا تخینہ۔ دا جہد مزل نا سر مننگ اسکان برجا سلیک۔




کمال بلوچ کا پیغام بلوچ نوجوانوں کے نام 

 ھما کہ راستی ءِ راہ ءَ اِنت۔۔۔ ھما منی سنگت انت
 میرے کاروا ن کے عظیم ساتھیو، بلو چ قومی آزادی کی جد وجہد کس جانب گامزن ہے اور اس میں آپ لو گو ں کا کردار کیا ہے اس سے بلوچستان کا ہر شخص بخوبی آگاہ ہے۔ ہم اپنا کر دار مزید کس طر ح بہتر طریقے سے ادا کرسکتے ہیں، یا ہمیں کس طرح کردار کرنا چاہیے اس بات پر غور کرنے کی ضرورت ہے۔ اس وقت جو تبد یلیاں دنیا میں رونما ہو رہی ہیں اس سے ہمیں با خبر رہنا چا ہیے۔یہ حقیقت ہے کہ طا قتور اور مظلوم کے درمیان جو رشتہ ہے وہ آقا اور غلام کا ہے، اس فلسفے کو سمجھتے ہو ئے ہمیں یہ جاننے میں آسانی ہو تی ہے کہ کیوں بلو چستا ن پر قبضے کے خلا ف آواز بلند کرنے پر ریاست ہمارے خلاف انتقامی کاروائیوں پر اتر آئی ہے۔ ہم آقا اور محکوم کے تفریق کو ختم کرنے کے لئے جدوجہد کررہے ہیں، اس لئے ہمارے لوگ چن چن کر غائب کیے جارہے ہیں اور ہمیں مسخ شدہ لاشیں مل رہی ہیں۔ خاص کر ہر بلوچ طالبعلم کے ذہن میں یہ سوا ل ضرور پیدا ہو نا چاہئے کہ یہ سب کچھ کیو ں اور کس لئے ہو رہا ہے؟ ان سوالوں کے جوابات تاریخ کے صفحات پر موجود ہیں، ہر نوجوان کو ان سوالوں کا جواب تلاش کرنا چاہیے۔ جب ہم تاریخ پر نظر ڈالتے ہیں تو کمزور اور حاکم کے فرق کو ختم کرنے کی جدوجہد کے حوالے سے صفحات کے صفحات بھرے پڑے ملتے ہیں۔ اس میں کوئی حیرانگی کی بات نہیں کہ زندہ رہناالگ بات، محکوم کے مرنے کااختیا ر بھی اس کے اپنے ہا تھ میں نہیں ہو تا ہے۔ بلوچ طالبعلم کی حیثیت سے ہمیں یہ معلوم ہونا چاہیے کہ تا ریخ کو بدلنے والے عظیم انسان عام طرح کے لو گوں میں سے ہوتے ہیں۔کیا معلوم تاریخ میں خود کو سرخرو کرنے کا یہ سہرا کون اپنے سر پر باندھے۔ہم میں سے ہر ایک یہ سو چ لے کامیابی ہم حاصل کرسکتے ہیں،اس کے لئے دن رات ایک کر نے کا جذبہ موجود ہو تو اس بات میں کوئی شبہ نہیں کہ اپنی مقصد میں کامیاب ہوجائیں۔ تاریخ کے اوراق جہد کاروں کو ہمیشہ سنہرے الفاظ میں یاد کرتے ہیں۔
بی ایس او آزاد کے کا رکنان کے ساتھ ہر بلو چ طالب علم پر فر ض بنتا ہے کہ وہ اپنے اند ر قومی جذبہ رکھے۔ کیو نکہ انقلا ب اور تبد یلی لانے والے نوجوان ہی ہو تے ہیں اگر چین، جنوبی کو ریا اور انڈیا کی تاریخ پر نظر ڈا لیں تو نو جو انو ں کا کر دار وہاں نما یا ں نظر آتا ہے۔ بلو چ جد وجہد میں بھی بلوچ طالب علم رہنما ہراول دستے میں موجود ہیں۔ مثال کے طو رپر ڈاکٹر اللہ نظر میر عبدالنبی سمیت دیگر بہت سے کردار ہیں جو آج اہم مقام پر فا ئز ہیں۔اس لئے میں آپ لو گو ں سے یہ عرض کر نا چاہتا ہوں کہ اپنے اندر اتنی مضبو طی پیدا کریں کہ کو ئی طا قت آپ لوگوں کوتقسیم نہ کر سکے، کچھ لوگ بی ایس او کے باقی دھڑوں کی موجودگی کو جواز بنا کر یہ سو چتے ہیں آج ہم کیو ں تقسیم ہیں۔ لیکن میر ے خیال میں یہ تا ریخی حقیقت ہے کہ ہم تقسیم نہیں بلکہ ہم دو مختلف نظر یات کے مالک ہیں۔ یہ نظر یہ بلو چ قومی آزادی اور انقلاب کی ہے دوسر ی سوچ وہی ہے جو پا کستان کے ساتھ رہنے کی حمایتی ہے۔اور یہی نظریہ قومی مفادات کی بجائے انفرادی مفا دات کو ترجیح دیتا ہے۔  ایک تا ریخ کے طالب علم ہو نے کے ناطے میں اُن سے یہ کہناچاہتا ہو ں کہ آپ لوگ غلط سمت پر جا رہے ہیں۔ جو تاریخ اس وقت رقم ہو رہی ہے اس سے آپ لوگو ں کو محروم رکھا گیا ہے، آپ غلط راہ کا انتخاب کر چکے ہیں۔ میں اس تحر یر میں بی ایس او پجا ر بی ایس او مینگل کے کا رکنان کو یہ واضح پیغام دینا چاہتا ہوں کہ وہ حقیقی راہ کا انتخاب کر یں۔ اسی میں بلو چ کی نجا ت اور ہما ری بقا ہے۔ کیو ں ہم تاریخ سے واقفیت کے باوجود تاریخ سے سبق حاصل نہیں کرتے؟ ہر کسی کے اشارے پر ادھر اُدھر دوڑنا شروع کردیتے ہیں۔ آئیں اسی راہ کا انتخاب کریں جس سے آزادی کے منزل تک پہنچا جا سکتا ہے، جہاں آزاد وطن و ریاست کے مالک بلو چ عوام رہیں۔ کم از کم اپنے اندر اس بحث کا آغا ز تو کر یں۔ آپ لو گو ں کے ذہن میں یہ بات ڈالی جا چکی ہے کہ بی ایس او آزاد نے غلط راستے کا انتخاب کیا ہے،یہ اس لئے کہا جا رہا ہے کیوں کہ بی ا یس او آزاد تاریخ کا درس دیتی ہے، بی ایس او آزاد اپنے حق پر بات کرنے کادرس دیتی ہے، بی ایس او آزاد کتاب اور قلم کی بات کر تی ہے۔اگر یہ درس غلط ہے تو پھر ہر وہ جہد کار غلط ہے جس نے آزادی کی جدوجہد کی اور ہر وہ حق گو غلط ہے جو حق بات کہنے کی جرات کرتا ہے۔ اگر قومی خوشحالی کی بات کرنا غداری ہے تو مجھ سمیت بی ایس او آزاد کا ہر کارکن غدار ہے۔ ہر بلوچ طالبعلم کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ اِس طرز کے منفی پروپگنڈوں کوناکام بنانے کی بھر پور کوشش کرے۔
ممکن ہے کہ کچھ دوست یہ سوچ رہے ہیں کہ کیوں بی ایس او کی لیڈر شپ پہلے کی طرح میڈیا میں نظر نہیں آتی ہے۔ میرے خیال میں یہ سوچ ایک مفروضہ ہے،ہم اپنے کا رکنان کیساتھ ہر وقت بحث مباحثوں میں ایک ساتھ ہیں ہم جہا ں کہیں بھی ہو ں ہر وقت ہم اپنے کا رکنوں کے ہمراہ ہیں اپنی تقریروں، پروگراموں اور تحر یو ں کی شکل میں ہم ایک ساتھ ہیں۔
 بی ایس او آزاد کے کا رکنو! آج بلو چستان کے حالات کس نہج پر ہیں اس سے آپ لو گ بخوبی باخبر ہیں۔ سیاسی معاملات کا مطالعہ کرنے کے ساتھ آپ ذرائع ابلاغ سے روز خبریں سنتے اور دیکھتے ہیں۔اسی لیئے بلو چستان کیلئے قابض حکمران کی پالیسیاں عالمی برادری یا کسی بھی بیرونی ادارے سے زیادہ آپ لو گو ں پر واضح ہیں۔ اگر آپ قبضہ گیر کی تماتر تر پالیسیوں کا بغور مطالعہ کریں تو آپ بخوبی اندازہ ہو جائے گاکہ ریاست اپنے استعماری مفادات کے حصول کیلئے کس حد تک متحرک ہے۔آج پاکستان اپنے استحصالی پروجیکٹس کی تکمیل کیلئے مختلف قسم کے حربوں کے ساتھ منفی پروپگنڈے بھی کر رہا ہے۔
اگر دیکھا جائے تو اس وقت ریاست کی پوری توجہ گوادرپورٹ کی تعمیر میں ہے۔ایک طرف تو ریاستی میڈیا پورٹ کے نام نہاد فائدے لوگوں کو بتارہی ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ یہا ں لو گو ں کو زندہ رہنے کیلئے پینے کاپانی تک دستیا ب نہیں ہے۔ تو کیا یہ بات سمجھنے کیلئے کا فی نہیں ہے کہ طاقتور کس طرح جھوٹ کا سہارا لیکر اپنے منصوبوں کو تکمیل تک پہنچانا چاہتی ہے۔لہذا اس دور کے تعلیم یا فتہ نوجوان جو تحقیق پر بھروسہ کرتے ہیں وہ تحقیق کر یں اور وہ بیما ری نکال باہر کر یں جو قومی صحت کیلئے نقصان دہ ہے۔ کہنے کامقصد آسان الفاظ میں آقا اور غلام کے رشتے کو جانناچاہئے کہ وہ رشتہ کیا ہے۔ بطور معاشرے کے زمہ دار طبقہ آج جو ذمہ داری ہم پر عائد ہے، یا جوذمہ داری ہم نے لی ہے، کیا ان پر ہم پو را اُتررہے ہیں؟ میر ے خیا ل میں جو محنت آپ لوگ کر رہے ہیں اس سے پو ری دنیا آگا ہ ہے۔ مگر اس خوش فہمی میں نہیں رہنا چاہیے کہ ہم منطقی منزل تک پہنچ چکے ہیں۔
بی ایس او آزادہزار مشکلات کے باجو د بھی اپنے پیغامات دنیا تک پہنچا رہی ہے۔سالوں سے بی ایس او آزادکے کا رکنان اور لیڈران کو پاکستانی فوج چن چن کر اغو ا کر کے قتل کررہی ہے۔لیکن اسکے باوجود ہما ری تنظیم کے کارکنان کے پاؤں میں لرزش تک نہیں آئی ہے۔ بلکہ اپنے کام میں مزید بہتری لا رہے ہیں۔ سرگرمیوں کو سر انجام دینے کیلئے ہما رے کارکن دن رات محنت کر رہے ہیں جو قابل ستائش ہے۔ جو سیا سی پر ورش آپ لوگوں کی اس پلیٹ فا رم پر ہو رہی ہے اس کا مقصد بلو چ نو جو انو ں میں سیاسی شعور پید اکر نا ہے، حق اور سچ کی راہ دکھا نا ہے تاکہ یہ آگاہی تمام بلوچ سماج اور نوجوانوں میں آ سکے۔ مستقبل کی رہنما آپ لو گ ہیں اگر اپنے مستقبل کیلئے فکر مند ہیں تو آج آپکو لازماََ جدوجہد کرنا ہوگی۔اس وقت بلو چ جنگی اور انقلا بی حالات سے گزر رہی ہے اس نازک صورت حال کو سمجھنے کی ضرورت ہے کہ کس طرح کی پالیسیاں تشکیل دینی چاہیے۔
بلوچستان میں نظام تعلیم ایک الگ بحث ہے کہ بلوچو ں کیلئے تعلیم کا دروازہ قبضہ کے پہلے دن سے بند رہا ہے۔اسی وجہ سے بلوچستان کے اکثر علا قوں میں پر ائمری تعلیمی ادارے ہی نہیں ہیں تو نوجوان کس طرح یورنیو رسٹیز جا سکیں گے۔ بیشتر اسکولوں میں پا کستان پرست نیشنل پارٹی اور دیگر پارلیمانی جماعتوں کے سفارشی بھر تی کیے ہوئے ٹیچرز تعینات ہیں۔ اس طرح کی مثالیں بلو چستان کے طول و عرض میں موجود ہیں۔ کہنے کا کا مقصد یہ ہے کہ ریا ست کبھی بھی یہ نہیں چاہتی ہے کہ بلوچ معیاری تعلیم حاصل کر یں۔بلکہ وہ بلوچوں کو جاہل رکھ کر صدیوں پیچھے دھکیلنا چاہتا ہے۔بلوچوں نے ماضی میں جس طرح ہر چیلنج کا سامنا کیا اور سرخرو رہے ہیں، اسی طرح آج کے زمانے کے چیلنجز کا سامنا کرکے بلوچ سرخرو نکلیں گے۔
تعلیم کا معیار پا کستان کی تعلیمی اداروں میں ہمیشہ نیچے ہی رہا ہے۔ اُس کے دانشوار خود اس با ت کو تسلیم کر تے ہیں کہ یہا ں سیا سی معاشی بحران کے ساتھ ساتھ اخلاقی بحران بھی اپنے عروج پر ہے۔ان تما م حالات کاجا ئز ہ لیں تو پاکستان کی اجتماعی صورت حال کو سمجھنا ہمارے لئے آسان ہوگا۔ چوں کہ پاکستان کی تشکیل قومی بنیادوں پر نہیں بلکہ مسلم بھائی چارگی کے نام نہاد نظریے کی تحت پر ہوئی ہے۔)یہاں اس بات کی وضاحت کرنا ضروری ہے کہ مختلف قومیتوں کے تشخص کو ختم کرکے انہیں مذہب کے نام پر یکجا کرنے کی دلیل کمزور ترین دلیل ہے(۔ اسی لئے آج ایک مخصوص طبقے کے علاوہ عام سندھی، پنجابی، پشتون اور دیگر قومیتیں بھی معاشی، سیاسی، ثقافتی استحصال کا شکار ہیں۔ اُن قوموں کو بلوچوں کی جدوجہد سے رہنمائی حاصل کرنا چاہیے۔ کیونکہ بلوچوں نے  ایک کٹھن راستے کا اتخاب ایک عظیم مستقبل کیلئے کیا ہے۔
ریاست کے نام نہاد د دانشور بلوچ قومی جد وجہد پر انتہائی منفی پر وپیگنڈا کر کے اسے غلط ثابت کر نے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ دوسری طرف پاکستان پر ست پا رٹیو ں کی جانب سے یہ پروپگنڈا رعام ہے کہ بلو چ خا نہ جنگی کا شکار ہیں۔وہ یہ بات ہر خاص و عام کو باور کرانا چاہتے ہیں کہ بلوچستان خانہ جنگی کا شکار ہے۔ مگر اس طرح کے خیالات حقیقت سے کو سوں دور محض اندازے ہیں۔ اس طرح کی باتیں پھیلانے کا بنیادی مقصد بلو چ تحر یک کو ختم کر نے کی ایک ناکام کوشش ہے۔ سیاسی کارکن ہونے کے ناطے ہمارے لئے ضروری ٹھرتا ہے کہ دشمن کے ہر منفی پروپگنڈے کو ناکام بناتے ہوئے تمام تر سیاسی تقاضوں، حقائق، کمزوریوں اور تغیرات کو مد نظر رکھ کر قومی آزادی کی جدو جہد میں بہتر سے بہتر کردار ادا کریں۔  ان معاملات کو سمجھنے اور ان مسائل کو حل کرنے میں دنیا کے تحریکوں اور اقوام کی تاریخ بہترین رہنماء ہے۔



عئید نا دے،گودی سمّی نا کلہو

:نوشت۔ عابد جان بلوچ
دنیا نا مچا قوم آک تینا مذہبی و قومی حوالہ اٹ سال اٹ منہ دے شادکامی، خوشی نا مناسبت اٹ اڈ ایترہ۔ ہر مذہب اندا شادکامی نا دے آ تینا پیروکار آتے خوشی کننگ، امن ایمنی نا سبخ تننگ، اسے ایلو نا کمک کننگ و غریب و مظلوم آتیتو اواری نا ترندی اٹ کلہو ایتک۔ دنکہ ہولی، دیوالی، کرسمس و عئید۔ دا اندا شادکامی نا دے کو کہ دنیا نا ہر بندغ ہرا مذہب آن تعلقدار ئس مرے او تینا مذہب نا وڑ و ڈول اٹ اندا شادکامی نا دے آ خوش وگل و بال مریک۔ تینا خڑک مُر نا سیال آتیتو خوشی بشخک۔ ولے سوج داڑے دا ودی مریک کہ انت دنیا نا مچا بندغ آک مچا زند اٹ اندا شادکامی نا دے آ خوشی کیرہ؟ دا نا شاید ورندی اخہ(منفی) اٹ ملیک۔
دنیا ٹی مچا انسان تا زند آ اگہ چنکو جاچ ئس الین تو ننے دنیا ٹی گڑاس اندونو قوم ہم نظر بریرہ ہراکے سال نا دوانزدہ تُو اٹ ڈکھ و ویل آتیٹی پلویڑ اننگا زند ءِ تدیفنگ او۔ ہر وخت اوتیا ظلم نا جمر سیخا کیک۔ خوشی نا ساعت بھاز مُر نظر بریک، جیل و زندان، پھاؤ، ٹارچر سیل، ٹارگٹ کلنگ، بے گواہی ڈول اننگا انسانیت سوز ظلم نا گواچی او۔ دا ہرا قوم آکو کہ دا زند ءِ تدیفنگ او؟؟؟
دا غلام و مظلوم آ قوم آکو۔ دنیا ٹی گڑاس خدائی نا دعوٰی کروکو، طاقت نا نشہ ٹی مست اننگا حاکم جابر آک نزور آ قوم آتا حق آتے پلانو۔ اوتے تینا غلام جوڑ کرینو۔ دننگا حاکم ظالم جابر ہر وخت اندا سوچ اٹ مریرہ کہ غلام آ قوم آن تینا منشا اٹ کاریم الننگ، اوتا حق آتے تینا عیاشی و شادکامی ٹی خرچ کننگ، اوتا ڈغار ءِ تینا قوضہ اٹ کریسہ تینا مفادآتے دوئی کننگ، غلام آ قوم نا باسک آتے کاٹم بڑزا کننگ نا خوف تننگ، تینا حق آتیکن کوکار کروکاتے ظلم نا گواچی کننگ، باشعور آ ورناتے زندان تیٹی بند کننگ، مظلوم نا بروکا چین آتے تعلیم آن مر تخنگ نا باروٹ ہر وخت سوچ و فکر کیرہ۔ حاکم دا خاطر آن غلام آ قوم نا تعلیم دوئی کننگ آن خلیک انتئے کہ ہرا وخت اسے غلام ئس تینا حق و وطن نا باورٹ شعور دوئی کرے و دنیا نا حقیقت ءِ پُو مس تو اودے تینا حق آتے دوئی کننگ آن دنیا نا ہچو طاقت ئس پدی اڑسنگ کپک۔ دنیا نا تاریخ اٹ دا وڑ نا کہی مثال آکو کہ قوم آک تینا ہر گڑا ءِ قربان کرینو ولے تینا حقیقی آ جنگ و جدجہد آن پدی متانو۔ دا جہد بھاز وخت بھلو وخت سیٹی تینا مزل آ سرمسونو و بھاز وخت چنکو وخت سیٹی۔ وخت نا ہچو اعتبار ئس اف۔باشعور آ غلام آ قوم آک تینا غلامی نا زند ءِ ایسر کننگ کن تینا زند و زند نا مچا آسودگی تے قربان کرینو۔
اندا ڈول دنیا نا تہٹی اسے مظلوم او قوم ئس جہد کرسہ نظر بریک ہراکے بلوچ قوم نا پن اٹ درست مریک۔بلوچ قوم دنیا نا ہمو قوم ءِ ہراکے تینا غلامی ءِ ہچو ڈول سیٹی ہم سہتانو۔ تاریخ گواہ ءِ کہ دنیا نا طاقتور آن طاقتور آ حاکم ظالم آک دا غریب آ دھرتی نا فرزند آتیتو جنگ کریر و تینا طاقت نا نشہ ٹی اندا سوچھار کہ دا بے اسلحہ غان امر جنگ کرور، دا تو منہ دے اٹ ختم مریرہ۔ ولے دنیا خنا کہ بلوچ دھرتی نا فرزند آک تینا قومی جذبہ ٹی اسے اندونو جنگ ئس کریر کہ ہراٹی او سلحہ نا جاگہ غا تینا قومی جوش و جذبہ ءِ دوئی کریر ہرانا سوب آن دشمن بے سرسوب کرسہ تینا دھرتی آن نرنگ آ مجبور کریر۔
داسہ اسے وار ولدا اسے ظالم جابر ریاست ئس قوضہ گیری ءِ تینا تالان کننگ کن ہر وڑ نا ظلم و زوراکی تے کننگ ءِ۔ ہڑدے آپریشن، ٹارگٹ کلنگ، پھاؤ آ ٹنگنگ، بے گواہ کننگ، ٹارچر سیل آتیٹی انسانیت سوز اذیت ترسہ شہید کننگ نا کاریم تے برجا تخانے۔ دا طاقت نا مست اننگا ریاست دا سمجھانے کہ دا وڑ نا عمل آتیان دا بلوچ فرزند آتی خوفزدہ کرسہ اوتے تینا حق آتا جنگ و جدوجہد ءِ الیر۔ دا ریاست نا بے وقوفی ءِ مچا دنیا نا مون آ تالان ءِ کہ طاقت نا زور آن دنیا نا ہچو باشعور قوم ئس زیات غلام سلپک۔ اینو دا ہڑی آ کچک آن بار ہر بلوچ فرزند ءِ ڈڑینگ نا کوشست کننگ ءِ۔ ولے دانا دا ناکامی مچا دنیا نا مون آ پاش مسونے۔
عئید نا دے آ مچا مسلمان آک تینا شادکامی تیٹی اختہ او۔ اللہ پاک نا پارہ غان مسلمان تے انعام اٹ اسے مبارک او تُو ئس تننگانے ہرادے رمضان شریف پارہ اندا رمضان شریف نا سلہ اٹ عئید نا دے بریک ہرادے آ مچا دنیا نا مسلمان آک خوشی و شادکامی کیرہ۔ ولے دنیا نا بھاز کم مسلمان تے دا معلوم ءِ کہ رمضان شریف صرف عبادت نا تُو اف بلکہ دا تُو غریب و مظلوم آ قوم آتا حق اٹ دعا کننگ، اوتیا مروکا ظلم و زوراکی تا خلاف تینا توار ءِ بڑزا کننگ، اوتا کمک ءِ کننگ نا ءِ۔
بلوچستان اٹ ظالم ریاست نا قوضہ غان پد عئید نا خوشیک ہر اوراغان پلنگانو۔ ہر عئید آ غلام بلوچ تینا بے گواہ مروکا فرزند آتا یات برانز کرسہ مچا دنیا نا انسان دوست و مسلمان تے دا ریاست نا ظلم و زواکی نا خلاف بش مننگ نا کلہو ءِ ایترہ۔
دا وار ولدا عئید خڑک مرسہ ئس منہ دے سلیسوسُر کہ اسے خبرئس نظر اٹ بس کہ بے گواہ ڈاکٹر دین محمد بلوچ نا بیگواہی نا ہشت سال پُورو مس داسکان ریاست ڈاکٹر دین محمد بلوچ ءِ تینا انسانیت سوز ٹارچر سیل آتیٹی بند کرسہ تشدد نا گواچی کرینے۔ ڈاکٹر دین محمد بلوچ نا اندا ہشت سال بیگواہی نا مکمل مننگ آن پد ہم ڈاکٹر ءِ یلہ نہ کننگ نا خلاف ڈاکٹر نا معصوم آ مسنک تینا قبلہ محترم نا رہائی کن پریس کلب کراچی نا مون آ احتجاجی کیمپ خلیرہ۔
دا خبر تیر آمبار کنا است اٹ لگا کہ دا خوشی نا دے آ معصوم آ کودک آک تینا باوہ غاتے ہر گڑا ءِ الننگ کن کہی دے مست منت کرسہ الفرہ، ولے کنا ہوش اٹ ہم الو کہ دا ڈغار آ اندونو معصوم او چنا ہم ارے کہ او صرف تینا باوہ نا انتظار اٹ عئید نا دے ءِ تدیفرہ۔ اف انت عئید۔۔۔ انت خوشی۔۔۔ انت شادکامی۔۔۔ انت پوسکنا پُچ۔۔۔ بوٹ و پین گڑا۔ انت اندادے پارہ انسانیت، مسلمانیت۔ بیگانا غاتیان گلہ اف داڑے تو گڑاس بزدل، بے ضمیر لغور بلوچ ہم اریر کہ اندا معصوم آتا ڈکھ دڑد آن بے خبر مستی تیٹی اختہ او۔ بلوچ قومی آجوئی نا دا جہد آن مر مرسہ ریاست نا ظلم آن بے خبر او۔ اینو دا گودی مہلب نا احتجاجی کمیپ صرف تینا قبلہ محترم نا رہائی کن اف بلکہ خاچو آ بلوچ فرزند آتے دا کلہو تننگ ءِ کہ ریاست نا ظلم زوراکی تا خلاف اخہ ہورے آ بش مریرہ ہموخہ ظلم نا گواچی مریرہ۔ اینو اگہ اسے مہلب ئس تینا باوہ نا ہشت سال بیگواہی نا ڈکھ دڑد ءِ سہانے تو دا صرف و صرف اسے آزاد ریاست سینا خاطر آن مسونو۔ گودی مہلب نا دا کلہو مچا بلوچ قوم نا خاچوک آ ورنا و بزدل و بے ضمیر آتیکن اسے اشارہ سے کہ اینو اگہ بش متاورے تو ریاست نا دا ظلم زوراکی انداخہ پین زیات مریک۔




سیاسی عمل میں چیلنجزاور ان کا سدِ باب

 

:جلال بلوچ

انسانی ارتقاء کو اگر ہم دیکھیں تو ہمیں یہ بات نظر آتی ہے کہ وہ شروع دن سے رکاوٹوں سے نکلنے کی تگ و دو کرتا نظر آئے گا۔ ایک مسئلہ ختم تو دوسرا سر پہ آن پڑا، دوسرا اپنے انجام کو پہنچا تو تیسرا۔سلسلہ یو ں ہی چلتا رہا ہے اور چلتا رہے گا ۔ دنیا میں کامیاب انسان یا بڑی ہستیاں وہ کہلائے جاتے ہیں جنہوں نے اس فطری حقیقت کا خندہ پیشانی سے استقبال کیااور رکاوٹوں کو راہ سے ہٹانے کے لیے ان کے سدِ باب کا ساما ن کیا۔انسان نے جب سے دنیامیں قدم رکھا ہے مشکلات اور رکاوٹوں کا سامنا کرتا چلا آرہا ہے، اگر ہم لمحہ بھر کے لیے سوچ لیں کہ اگر زندگی میں چیلنجز نہ ہوں تو زندگی کیسی ہوگی، یعنی ہر کوئی آرام اور سکون کی زندگی گزار رہا ہو،آیا ایسے میں زندگی پہ جمود طاری نہیں ہوگا اور اگر جمود طاری ہو تو؛ کیاانسان نت نئے تبدیلیوں کا پیش خیمہ بن سکتا ہے یا بن سکتاتھا؟انسان کی اسی سرشت نے چیلینجز قبول کی تو ستاروں کو تسخیر کرنے کے عمل سے گزررہا ہے۔چیلینجز اور رکاوٹوں سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ انسان کی زندگی اس وقت بے رونق ہو جاتی ہے جب اس میں مشکلات اور چیلینجز کا پہلو شامل نہ ہوں۔
سماجی عمل میں رکاوٹوں اورمشکلات پر اگر بات کی جائے تو قلم کی سیاہی خشک ہوگی پر بات اپنے انجام کو پہنچ نہیں پائے گا۔ ہمارا مضمون انقلابی اور سیاسی عمل میں درپیش رکاوٹیں اور ان کے سد باب اور تدارک ہے۔ہم یہ دیکھنے کی کوشش کرینگے کہ سیاسی عمل میں چیلینجز سے کیا مراد لیا جاتا ہے ،یہ مشکلات کیسے آتے ہیں اور ان کے سدِباب کو ممکن کیسے بنایاجاتا ہے؟
ہر سماج جہاں سیاسی یا انقلابی عمل شروع ہوتا ہے یا جہاں لوگ تبدیلی کی بات کرنے کے ساتھ ساتھ عملی طور پر اپنا کردار نبھاتے ہیں ، اس میں رکاوٹوں کاراہ میں حائل ہونا فطری عمل ہے ۔ بعض اوقات قوموں کے عروج و زوال کا جب ہم مطالعہ کرتے ہیں ان کا جنہوں نے عروج حاصل کیایا جو زوال پذیری کا شکار ہوئے توان کے اس عمل میں چاہئے کامیابی ہویا ناکامی، رکاوٹوں کے سدِباب کے عوامل ہمارے سامنے آتے ہیں ، جو فتحیاب ہوئے ان کے تدابیر اور جو ناکام ہوئے ان کے دورانِ عمل کی کمزوریاں عیاں ہوتی ہیں۔
سیاسی عمل میں چیلینجز کے اسباب کے جو بنیادی عوامل ہیں ان میں سماج کی نوعیت ،جس میں جغرافیہ ، آب و ہوا، سماج کا معیار(تعلیمی اور معاشی)،حالات، سماج میں رہنے والے مختلف طبقات کے مقاصد،مخالفین کے مقاصداور دنیا کے حالات قابلِ ذکر ہیں۔ سیاسی کارکن اگر ان عوامل کو پسِ پشت ڈال دے تو وہ کبھی بھی مسئلہ اور اس کی نوعیت کو سمجھ نہیں پائے جس سے مسائل اتنی پیچیدہ صورت اختیار کریں گے کہ مسئلہ یارکاوٹ کئی اور مسائل جنم دینے کے اسباب فراہم کریں گے۔

چیلنجز سے نمٹنے کے لئے منطقی سوچ بنیادی اہمیت کا حامل ہوتا ہے ،منطق کے بغیر کام پیچیدگیوں کا سبب بنتا ہے۔
کسی بھی سیاسی انقلابی عمل میں درپیش مسائل کچھ اس انداز میں ہمارے سامنے آتے ہیں ۔
۱۔ سماج میں بسنے والے باشعور،ترقی اورتبدیلی کے حامل لو گ پرانے طریقہ کاریا یوں کہیے کہ فرسودہ طریقہ کار، یا استحصالی نظام سے اتنے دل برادشتہ ہو چکے ہوتے ہیں کہ وہ نئی راہوں کا تعین کرنے کی جانب پیشرفت کرنے پر مجبور ہوجاتے ہیں۔ یہ جانتے ہوئے بھی کہ راہ میں بہت ساری مشکلات آئیں گے ۔ جذبات کی بنیاد پر تو سبھی سماج ایسے مسائل سے نمٹنے کی کوششیں کرتے ہیں ،پر اس امر میں کامیاب ایسے معاشرے ہوتے ہیں جن کے پاس مسائل سے نمٹنے کا منطقی طریقہ کار موجود ہوں ، جو تخلیق اور تسخیرکے ہنر سے آشناء ہوں۔اگر ایسا نہیں ہوا یا انا کے گھٹا ٹوپ اندھیروں میں سماج ڈوبا رہا تو اس کے صفحہ ہستی سے مٹنے کے اسباب بھی اس کے اسی عمل سے شروع ہونگے۔ ابتداء میں جو بنیادی مسائل درپیش آتے ہیں ان میں
1۔ سیاسی جد و جہد میں یہ دورانیہ ہر تحریک کو لاحق ہو ا ہے ، کام یقیناً مشکل ہے جس میں سماج کا پرانے یا روایتی طریقہ کار کو چھوڑ کر نئی روش اختیار کرنا ،وہ بھی کسی ایسے سماج میں جہاں قبائلی طرزِ زندگی ہو، تعلیم کا میعار غیر تسلی بخش ہو اور اگر پڑھے لکھے لوگ ہوں تو وہ بھی بینکنگ نظامِ تعلیم سے فارغ التحصیل ، جنہیں روزی روٹی اور روز گار کے سوا کچھ اور سو جھتا ہی نہ ہو۔اب ایسے سماج میں جہاں لوگ غلامانہ طرزِ زندگی، وہ چاہے انفرادی غلامی کی قسم ہو یا اجتماعی صورت میں ہو، جہاں لوگ انا کی خول میں مقید ہوں یا قبائلی سوچ کی زنجیروں میں جھکڑے ہوئے ہوں ، اب سماج میں اگر ایسی سوچ کے حامل لوگ رہتے ہوں توکسی نئی سوچ کی شروعات یا جدت پرستی کسی صورت کسی چلینج سے کم نہیں ہوگا ۔ سیاسی عمل جہاں تبدیلی کی بات ہورہی ہوتی ہے وہاں عمل کی راہ میں جو رکاوٹیں سامنے آتی ہیں ان میں ابتدائی کردار ایسے معاشروں کا ہی ہوتاہے جو تعمیر نواور عمل کی راہ میں حائل ہوتے ہیں ۔
2۔ غلامانہ سماج میں ایسے افراد اور جماعتیں موجود ہوتے ہیں جو سماج پر اپنی اجارہ داری قرار رکھنے کے لیے غلامانہ سوچ کو پروان چڑھاتے ہیں جنہیں سیاسی اصطلاح میں نام نہاد جمہوری سوچ کے حامل افراد کے القابات سے نوازا جاتا ہے جو مخالفین کے مقاصد کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لیے آکسیجن مہیاء کرتے ہیں ۔ نئی سوچ چونکہ اپنے ارتقائی عمل سے گزر رہی ہوتی ہے اور بلوغیت کی سیڑھی تک پہنچنے سے پہلے نئی سوچ کو ختم کرنے کے لیے ایسے عوامل انتہائی درجے کی کوششوں میں مگن رہتے ہیں ۔ایسے افراد اس بات کا بخوبی ادراک رکھتے ہیں کہ نئی سوچ اور طریقہ کار اگر رائج ہوا تو اس سوچ کے حامل افراد گدیوں پر براجمان ہونگے جس کے مثبت اثرات بہت جلد عوام ذہنی طور پر قبول کرینگے ، یہ جانتے ہوئے کہ عوام کا نئی سوچ کی جانب گامزن ہونے سے پرانے طریقہ کاراور اس کے کرداروں کی موت واقع ہوگی اسی لیے وہ عوام کو گمراہ کرنے کوئی موقع ہاتھ سے جانے نہیں دیتے ہیں۔ بلوچ سماج میں ایسی سوچ ہمیں بلوچ پارلیمانی پارٹیوں میں بکثرت دکھائی دیتی ہے جن میں نیشنل پارٹی، بی این پی (مینگل) اور بی این پی (عوامی) قابل ذکر ہیں۔ان کی تاریخ اور کردار کے بارے میں بہت کچھ لکھا جاچکا ہے اور اگر ان کی حالیہ کارکردگی کو دیکھیں توپا کستان کی پارلیمانی کرسیوں کی بندر بانٹ میں ایک دوسرے سے سبقت لے جانے کی کوششوں میں لگے رہتے ہیں ۔دراصل یہاں قبضہ گیر کی پالیساں ہوتی ہیں جو انہیں اس نہج پہ پہنچاتی ہیں ، قبضہ گیر کی پالیسیوں کا مقصد عوام کوایسے موضوعات فراہم کرنے کی کوشش ہو تی ہے کہ جس سے عوام نئی سوچ اور طریقہ کار سے دور ہوں۔ ریاستی عمل کے ایسے اثرات ہمیں بکثرت ایسے حالات کے حامل سماج میں، وہ چاہے دنیا کے کسی بھی حصے میں واقع ہوں دیکھنے کو ملتی ہیں ۔
3۔ غیر ترقی یافتہ معاشروں میں یا یوں کہیں کہ ایسے معاشروں میں جن میں لوگ اپنی راہوں کے تعین کرنے کا عزم کرچکے ہوتے ہیں ، استعماری قوتیں مذہب کے ٹھیکداروں کو جدت پسندوں کے مقابل لا کھڑا کرتے ہیں ۔ قدامت پسندمعاشروں میں چونکہ عقیدہ انتہائی حساس معاملہ ہوتا ہے جسے استعمال کرنے کے ہنر سے دشمن آشناء ہوتا ہے۔ عقیدے کا بطور ہتھیار استعمال کرکے دشمن سماج کومذہبی
منافرت کا شکار کرتی ہے جس سے سماج میں افراتفری پھیل جاتی ہے ۔ بلوچ سماج کااگر جائزہ لیا جائے تو ۱۹۸۶ء میں کوئٹہ میں شیعہ مسلک سے تعلق رکھنے والوں پرریاستی حملہ اس وقت کے پولیس ڈی یس پی ہمایوں جوگیزئی کی سربرائی میں شروع ہوئی ۔یہ وہ دورتھا جب بلوچستان میں آزادی پسندوں نے اپنے آپ کو منظم کرنے کے لیے اپنے کیمپ تشکیل دینے کا عمل ایک عرصے کی خاموشی کے بعد پھر سے شروع کی تھی۔ ریاست کو اس بات کا بخوبی علم تھا کہ اس سے پہلے کہ بلوچ سماج اس نئی سوچ کو پروان چڑھائے ان میں ایسی منافرت کو ہوا دی جائے جس سے سماج میں رہنے والوں کی سوچ منقسم ہو۔۱۹۸۶ء سے لیکر آج تک بلوچ سماج کو ریاست کے ایسے اوچھے ہتھکنڈوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے جو کبھی شیعہ سنی ، کبھی بریلوی دیوبندی تو کبھی نمازی ذکری کی صورت میں سامنے آتا ہے ۔اس ریاستی پالیسی میں اب تک ہزاروں افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں اور لاتعدا د لوگ بیرونِ ملک ہجرت کرچکے ہیں جن میں ہزارہ برادری کے افراد قابلِ ذکر ہیں۔ اب تک کی یہ ریاستی پالیسی نئی سوچ کی راہ میں تریاق کا کام کرتی چلی آرہی ہے ۔ابتدائی دور میں تو چند ایک گروہ ہی وجود رکھتے تھے اب جب کہ جہدِ عمل میں برق رفتاری آئی ہے تو مذہبی انتہاء پسندوں کے گروہ بھی ریاستی پشت پناہی میں اسی شدت کے ساتھ بڑھ رہے ہیں۔
سدِباب:۔ بلوچ سماج میں گزشتہ تحریکوں کی کاکرکردگی کا اگر جائزہ لیں تو سماج اور موجودہ تحریک پہ اس کے اثرات کے بہت سارے عوامل سامنے آئینگے اگر غیر جانبداری سے تحقیق ہو تو اس سے ہم نتیجہ اخذ کرسکیں گے کہ گزشتہ ادوار میں جس انداز سے تحریک کی آبیاری ہونی تھی نہیں ہو پائی ، ہمیں جس انداز میں نئی سوچ کا پرچار کرنا چاہیے تھا وہ نہیں ہوا، سیاسی عمل میں جن طریقہ کار کو اپنانا چا ہیے تھا ہم اس سے روگردانی کرتے رہے ۔ جس کی وجہ سے تحریک کی راہ میں مشکلات یا اکثر جو ہمیں دیکھنے کو ملتی ہے وہ ہے گزشتہ ادوار میں تحریک میں تسلسل کا نہ ہونا۔جن کی وجہ سے اغیار نے ہر موقع پہ زہر اگلنے کے عمل کو جاری رکھا۔ جس کے اثرات سماج میں ہمیں مختلف طریقوں میں دیکھائی دیتی ہیں۔جیسا کہ اوپر ذکر ہوچکاہے یعنی روایتی سوچ، وفاق پرستی اور مذہبی انتہا پسندی ۔
ان چلینجز سے نمٹنے کے لیے سیاسی عمل میں جب تک سیاسی ثقافت پروان نہیں چڑھتی اس وقت تک نشیب و فراز کا یہ سلسلہ ختم نہیں ہوگا۔ چلینجز اور مشکلات سے مقابلہ کرنے اور ان سے گلوخلاصی کے لیے سیاسی رہنماوں کو اس جانب جو اقدام کرنے چاہیے وہ ہیں
1۔ اداروں کا قیام اورانہیں مستحکم بنیادوں پہ استوار کر نے سے سیاسی عمل میں تعمیر اور ترقی کی راہوں کا تعین کرنا ممکن ہوجاتا ہے کیو نکہ فیصلے فرد سے اداروں کو منتقل ہوتے ہیں جس میں ہمیشہ اجتماعی سوچ پروان چڑھتی ہے جو سماج میں تبدیلی کے آثار کا پیش خیمہ ثابت ہوتی ہے۔ اداروں کے قیام اور ادارتی طرز اپنانے سے جلد عوام کا اعتماد حاصل ہوتا ہے جس سے عوام اور رہنماء مسائل ایک ہی صف میں نظر آئینگے۔ جو عمل اور تحریک کی آبیاری میں کلیدی کردار کا حامل ہے جس سے راہ میں حائل رکاوٹوں کا خاتمہ اور مقصد کاحصول ممکن ہوجاتا ہے۔
2۔ جب اداروں کا قیام عمل میں لایا جاتا ہے تو اس سے کام کی تقسیم کا عمل آسان ہوجاتا ہے جس سے کام میں خلل کے آثار کے امکان بہت کم ہوں گے اور اس سے جو عمل کرنے جارہے ہو اس کے متاثر ہونے کے امکانات محدود ہوجاتے ہیں۔ہاں البتہ اس ضمن میں مشکلات یہ درپیش آتی ہیں کہ سیاست کے مختلف شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے یااپنے کام میں ماہرین کی قلت ہوسکتی ہے ، لیکن اس کمی کو پورا کرنے کے لیے جنہیں ذمہ داریاں سونپی جائے ان کے ساتھ کمک کار( ایسے افراد جو ممکن ہے کہ اس سیاسی عمل میں پیش پیش نہ ہوں لیکن کام جو ہو رہا ہے اس میں مہارت حاصل ہوں) ہونے چاہیے۔ ایسے افراد کی مشاورت اس کمی کو کسی حد تک پورا کرسکتی ہے ۔
3۔تعلیم و تربیت کے بنا کسی سوچ کی ترقی “خام خیالی سے زیادہ کچھ نہیں” ۔ کسی بھی سیاسی پارٹی کو اگر اپنے مقاصد احسن طریقے سے حاصل کرنے ہیں تو ان کی پہلی ترجیح اپنے ورکرز کی تعلیم و تربیت کے حوالے سے ہونی چاہیے۔ اس حوالے سے ان کی ہر ممکن کوشش ہوکہ ورکرز کو وقت و حالات کے مطابق بہتر سے بہتر تعلیم و تربیت کے مواقع فراہم کریں۔سیاسی تحریکیں جہاں آزادی کی سوچ اور عمل دونوں موجود ہوں تو ایسے میں سیاسی ورکروں کے لیے ریاستی اداروں میں تعلیم کے دروازے بند کیے جاتے ہیں جس کی تازہ مثال بلوچ سٹوڈنٹس آرگنائزیشن (آزاد) جو کہ خالص طلباء تنظیم ہے اس پر ریاستی پابندی جس سے طلباء کے لیے ریاست میں موجود تمام اداروں میں تعلیم کے دروازے بند ہوگئے ہیں۔ایسے حالات دنیا کی دیگر آزادی پسندوں کو بھی پیش آئیں ہیں ، سوچنا یہ ہے کہ ایسے مواقع پہ کونسے اقدام کرنے چاہیے جس سے تعلیم کا سلسلہ چلتا رہے۔ مشکلات اور مسائل تو بے شمار آئینگے۔ جن میں ماہرین کی کمی، تدریسی مواد کا انتخاب، تدریسی مواد کی منتقلی، معیشت اور دیگر جن کا حالات تقاضہ کرتی ہے۔لیکن اگر سوچ منطقی ہو تو ہر مسئلے کا حل احسن طریقے سے ممکن ہے۔
چار الفاظ لکھنے یا ان کے پڑھنے سے یہ ممکن ہی نہیں کہ ہم آنے والے یا موجودہ چلینجزکا خندہ پیشانی سے مقابلہ اور ان کے تدارک کے لیے کوئی جامہ حکمت عملی وضع کریں جب تک ہم اس حقیقت کو من و عن تسلیم نہیں کریں گے کہ دنیا میں شاید ہی کوئی ایسا عمل موجود ہو جسے پایہ تکمیل تک پہنچانے کے دوران چیلنجز کا سامنا نہ کرنا پڑتا ہو۔اسی طرح سیاسی عمل میں ہر قسم کے چیلینجزکا آنا سیاسی عمل کا حصہ ہوتا ہے۔چیلینجز کے مثبت اثرات بہت زیادہ ہوتے ہیں جن کا اگر ہم بغور تجزیہ کریں تو اس کے دنیا میں آزاد ہونے والوں پہ جو اثرات پڑے ہیں وہ آج سب کے سامنے عیاں ہیں ۔دراصل اس عمل میں کامیاب وہ ادارے یا سماج ہوتے ہیں جہاں سیاسی ثقافت مضبوط ہوتی ہے سیاسی سوچ کی وجہ سے وہاں چینجز کو مثبت انداز میں دیکھا جاتا ہے کیونکہ وہ اس با ت کو بخوبی جانتے ہیں کہ اگر چیلنجز نہ ہوں تو ترقی ممکن نہیں یا نئی سوچ کا پروان چڑھنا ممکن نہیں ، تعمیر اور تخلیق ممکن نہیں ، آگے بڑھنے اور کام کرنے کا جذبہ اجاگر نہیں ہوگا، اگر چیلنجز نہ ہوں تو عمل اور عمل کرنے والوں پہ جمود طاری ہوگی۔ ان کی ذہن سازی نہیں ہوگی، ان کے لیے وقت و حالات کو پرکھنے کے مواقع دستیاب نہیں ہونگے۔
جب ہم مثبت انداز میں چلینجز کو ذہنی طور پر قبول کرتے ہیں تو ہر مشکل کا سدِباب ہمارے لیے ممکن ہوگا وہ چاہے سمتِ مخالف سے آنے والی کوئی بھی پالیسی اور عمل ہو۔




مجرم

رَخشان بلوچ
شام نا آذان خڑک اس ننے اشتافی ٹی شال آ ن تینا شارا بروئی اس۔۔۔
شہید بگٹی روڈآ اسے اِرا رکشہ والا تون ھیت کرین اوفک پاریر دا وختا ننے ہزار گنجی آ بننگ وارا کنپک ۔۔۔
انداڑتون اسہ رکشہ ئس ننا گورا سلیس دا رکشہ نا مونا نواب خیر بخش مری نا فوٹو و تہٹی شہید بگٹی و شہید بالاچ خان مری نا فوٹو ک خلوک اسُر۔۔۔
نن چائسون تینا بلوچ آسے۔۔۔
نن بلوچی ٹی ھیت کرین او بشخندہ ٹی پارے نم تینا بلوچ اُرے ای نمے ہزار گنجی آ دیواولے داوختانما شارآ کن گاڑی مشکل ءِ ۔۔۔
نن پارین نی ننے در اینگ ننا بخت ۔۔۔
نن اوڑتون خوش مجلس مسون ۔۔۔
اوتینا پن ءِ میرک پارے ۔۔۔
میرک پارے کہ نن مری قبیلہ غان تعلق تخنہ ۔۔۔
کوھلوٹی جنگی حالت آن تینا خاہوت تون اوار نیوکاہان شال آ بسونن ۔۔۔
کنا باوہ ہموڑے جنگ اٹ شہید مسنے ۔۔۔
او حوال اٹ دا ہم پارے ای تینا مال تے سودا کریٹ و روزگار کن رکشہ چلیفیوہ ۔۔۔
نن وختس اودے سوج کرین کہ دافوٹوتے نی خلکنس اینو پگہ بنگونن دافتیان ہم سرکارنا کارندہ غاک بد دیرہ دافتے کشرہ ۔۔۔؟
اوپارے راست ءِ کہ ایزدے سنگت ئس پارے کش تاغریب بندغ ا سے اُس ایف سی والاک دے نہ دے ئس سڑک آ بے عزت کرور نے ۔۔۔
ای پاریٹ حیف ءِ کنا بلوچیت آ کہ تینا گدروکا ہستی تا پنے رکھنگ کپر۔۔۔
نی اگہ تینا لمہ نا گُد ءِ کشنگ کیسا تو ای دافتے کشوٹ ۔۔۔
میرک مون مُستی ہزارگنجی کہ روان دا ہم پارے کہ اینو پگہ دشمن ننے وڑ وڑ نا عمل وحربہ تے ٹی خلنگ خوائک ۔۔۔
دُنکہ درو سنگت ئس کنے پارے کہ ایجنسی تا کارندہ غاک اخبار سودا کروک دُکان تا گورا سلرہ ھُریرہ کہ کس اگہ بلوچ قومی تحریک ءِ مونی درو ک اخبار تے خوانک اودے ہم ایجنسی والاک ارفرہ ۔۔۔
او بشخندہ تون پارے دا سا ھیت باز مونی انانے ۔۔۔
گڑاک واضح مننگو۔۔۔

کاریم برجاءِ ۔۔۔
دشمن اخلاقی شکست کننگنے ۔۔۔
داسا ننے ٹی جرأت مرے ۔۔۔
ننے اسہ رکشہ چلیفوک بلوچ آ سینا دا خہ در نظریاتی و پُر فکر مننگ حیران کرے ۔۔۔
نن وختس ہزار گنجی آ رسینگان خفتن نا ازان مننگ اس۔۔۔
میر ک ءِ رخصت کرین ونن اونا پچار ٹی تما ن ۔۔۔
اودامنّان کہ مری و بگٹی قبیلہ نا قربانیک روشنادے امبار پاشو۔۔۔
دافتا ذہن سازی باز مسونے
دا ورنا ناذہن سازی اند ا پائک کہ داڑ ا کس کاریم کرینے کہ میرک داخس تیار ءِ ۔۔۔!
ہفتہ سے آن گڈ اخبار ٹی فوٹو ئس خناٹ۔۔۔
نوشتوک ئس میر ک مری اَرادے غائب کننگا سس اونا تشدد زدہ جُشوک آ جون چلتن نا پاناد آن خننگانے ۔۔۔۔۔۔




محمد حسین عنقا اَسے گچین جہد کار ئس 

:ریحان بلوچ

بلوچستان اٹ صحافت نا مرے ، سیاست مرے ، تاریخ مرے یا کہ ادب ہر پڑا ہیت کننگ کن اَسے سوبر و پِن ئس خواجہ محمو حسین عنقا نا نظر بریک۔ ہرا تینا قوم اَنا آجوئی و تینا قوم انا خذمت کن ہر ڈول اَنا سختی سوری تے تینا نازرک آ جون آ برداشت کریسہ تینا اُلس نا حق کن نہ صرف توار بڑزا کریربلکہ اوفتے کن عملی وڑ اٹ ہم جہد کریسہ باز کاریم کریر۔
محمد حسین عنقا صاحب تینا قوم اَنا توارءِ ملک و ملک آن پیشن سر کننگ کن تینا دور اَنا صحیفہ نا کمک ءِ الیسہ اوفتا حق نا توار ءِ غیر ملکی تا خف تسکا ن سر کرے ۔ خواجہ کلمۃ الحق ، بلوچستان سماچار ، حقیقت،بلوچستان جدید ، بلوچستان ، بولان ، ینگ بلوچستان اخبار تے مختلف وخت اٹ شائع کریسہ کرے ۔ 1933 آن الیس 1939 اسکان 9 اخبار پد مہ پد شائع کریسہ کرے(باز جاگہ بریک کہ او 17 اخبار کشہ)۔ داخس اخبار شائع کننگ نا پد اٹ دا ہیت ءِ کہ اودے اونا دشمن ہچ برداشت کتوکہ کہ او تینا حق اَنا توار ءُ تینا قوم اَنا ہیت ءِ کہ ہندا خاطر آن اونا دشمن اونا قوم اَنا دشمن اونا صحیفہ (اخبار) تیاپابندی خلیسہ کریکا ولے دا عمل اونا ہمت ءِ نزور کتو کہ او ہر اخبار نا بند مننگ و پابندی آن گڈ اَسے پین اخبار ئس شائع کریکہ تاکہ اونا مخلوق نا بیوسیک کل نا مونا ظاہر مریر۔اونا ہندا سیاسی و صحافی عمل اودے ہر وخت قید کریفیکہ۔ولے قید مننگ آن باوجود ہم خواجہ محمد حسین عنقا ؔ حکومت آن دا خواست کریکا کہ اودے نوشت ءُ خوان نا اجازت ملے تاکہ او تینا راست انگا جہد اَنا بارواٹ کل ءِ سہی کے ۔ ہندن خواجہ عنقا ؔ بیست سال قید اٹی تینا زِند ءِ تیر کریسہ نوشت ءُ خوان نا سلسلہ ءِ جاری تخسہ کرے۔ہندن او تینا زند اٹ شاعری نا کتاب ’’راحیل کوہ‘‘ ءِ برجا تخا ہرا کہ فارسی اردو ءُ بلوچی زبان اٹ ئس ۔ دا کان بیدس خواجہ ، ’’بلوچ قوم کی قدیم تاریخ ، بلوچستان کی کہانی میرے زبانی، میں اور میرے خواب،بلوچی افسانے ، بلوچی زبان ءُ قاعدہ ، بلوچی ترانہ ، بلوچ قوم کی انقلابی تاریخ ءُ دیوان غالب نا شرح،ءِ نوشتہ کرے ولے اونا زند اٹ اونا بیرا اِرا کتاب ،راحیل کوہء ُ بلوچ قوم نا تاریخ ، 1973 اٹی شالکوٹ آن شائع کننگار۔
دا نن کل اکن ڈکھ اَنا ہیت ئسے کہ اینو دُن انگا بندغ آ ک ننا تاریخ ان مٹاہِنگیسہ کننگو ۔ ہرا نا کل ان بلا سوب دادے کہ شخصیت پرستی ٹی اختہ اُ ن و بلوچستان ناحقّی آ خواجہ غاتے اُست اَن دننگ اُن۔ خواجہ محمد حسین عنقا بلوچستا ن ناو بلوچ قوم اَنا ہمو سرخیل آتیان اسٹ ءِ ہرا تینا مچ زند ءِ بلوچ قوم نا لنگڑی و خواری تے مُر کننگ کن جہد کریسہ اسور۔ خواجہ محمد حسین عنقا ہرا وخت کہ ہندوستان نا مخلوک آجوئی کِن قیدءُ بندنا سختی تے سگنگ اسور ءُ آجوئی دوی کننگ کِن آختہ اسورا ءُ زار روس نا بادشاہی نا تخت ءِ مزدور آک تینا کننگ نا جہد اٹ اسورا۔ تو دانا اثر بلوچ اَانا ورنا۔ عبدلعزیز کردؔ ، یوسف عزیزؔ مگسی ، ملک عبدالرحیم خواجہ خیلؔ ، محمد فاضل ؔ محمد شہی، ملا محمد عمرؔ پڑنگ آبادی ، بابو کریم شورش ؔ ، پیر بخش ؔ ، نسیم تلوی ؔ ، مولوی غلام حیدر نوشکویؔ تون اوار خواجہ محمد حسین عنقا غا ہم تما ۔ہرا خیسن خنی تا مونے توننگ کن دا سرمچار اک لمہ کن مُچ سختی سوری تے برداشت کریسہ جہد برجا تخار۔
دا سَد افسوس نا ہیت ءِ کہ اینو بڑز لکھوکا تا زیات تر پِن تیان نن بے خبر اُن دا ننے سما اف کہ دافتا کِرد انت مسونے ۔انت کرینو ۔ دیر کن کرینو ۔ انتئے کرینو۔یخ اٹ باسُنی اٹ انتئے تینے در پہ در کریسور۔ اوفتا مقصد ۔اوفتا جہد انت اکن ئس۔ کاش ننے سما مروسُس کہ محمد حسین عنقا ء ءُ بلوچ لیڈر ءُ نوشتہ کروکاتا جہد بلوچ قوم نا پِن ان شروع و بلوچ قوم نا پِن آ ختم مسکہ تو کنا خیال نن اینو اونا پِن اَن نا بَلد متونا۔اوفتا قدر ءِ کرینہ اوفتا پِن اٹ بلو بلو سیمنار کرینا۔ اوفتا پِن اٹ بلو بلو انسٹیٹوٹ جوڑ کرینہ ۔ ننا چُنہ چُنہ اوفتا کِڑد ءُ اوفتا پِن ان واقف مسورا۔ ولے افسوس نا ہیت دا کہ ایلو قوم اَنا بندغ اک تینا جاگہ محمد حسین عنقا کونہ بندغ آتا اہمیت اوفتا اُرا والاتے سما اف۔ ہندا خاطرآن اونا غیر مطبوعہ نوشت آتے اونا اولاد آک نیمہ ءِ تا سودا کریر و نیمہ تا کچرا جوڑ کریسہ کچرا دان تا گواچی کریر۔ مچھ اٹ اونا پِن اٹ اسے لائیبرری ئس جوڑ تو مس ولے اوٹی چَر سی و موالی تا اڈہ جوڑ مس ۔ ہراٹی پورا دے جُوا خلیرا ۔ہرا ننا شعور و ننا چائنداری آ کئی سوال آتے بڑزا کیک ۔ دا عملءِ خننگ ان گڈ بلوچ قوم ءِ محمدحسین عنقا ء و اونا جہدکار آ سنگت اک بد دعا کرور۔ اسٹ او اسور کہ تینا دین و ایمان ،شہرت ، دولت کل بلوچ قوم ءِ کریسور۔ اسٹ دا قوم ءِ کہ او تینا دین ایمان ، دولت شہرت ءِ غیر آتا سودا کننگو۔
20 ستمبر 1907 آمچھکان اٹ خواجہ محمد عبداللہ نا اُرا ٹی ودی مروکا محمد حسین عنقا ء بلوچ قوم اَنا تحریک اٹ اسے باز بلو پِن ئسے دا ہمو پن ءِ ہرا یوسف عزیز مگسی و میر عبدالعزیز کرد کونہ پن تیتون اوار بریک ۔ اونا فکر انا بلونی او نظریہ پختئی اودے ہچ وخت ئس کمزور کننگ کتو ۔ حالانکہ زندگی نا آخری دے تیٹی کینسر نا گواچی ئس ولے ولدا ہم اونا جوزہ غاک تُرند اسور ۔ ’’ ای دا وخت 60 سال نا عمر اٹی اٹ ولے الحمداللہ کنا عزم جوان ءِ و قبر اسکا دا ضعیف مفرور۔‘‘
بائدے نن دن انگا بندغ آتے تینا رول ماڈل جوڑ کین اوفتا ہمت ، حوصلہ ، فکر ، نظریہ ، مقصد کل اَنا ترجمانی کین ، اوفتا خواجئی کین، اوفتے یاد کین ، تینا بروکا نسل کن داشخصیت آتے ہندن پیش کین ہرا اوفتا اصل کردار مسونے تاکہ ننا بروکا نسل دافتیان اثر ہرفے ۔