Death be not too loud Editorial By: BSO Azad Tribute to Baloch Martyrs

The endless slogging,

Sleeping under the stars,

Navigating by the stars,

the cold

Lonely vigil of the sentry at night,

The misery,

The hunger,

The exhaustion,

The comradeship,

The terror,

And exhilaration of being underfire,

The joy at survival,

The dream of home,

The shimmer in eyes

For only a cause

Freedom Freedom Freedom

And glare in the eyes

For embracing the martyrdom.

We saw the thing coming at us, we looked like a wobbling, wavering ball of fire. Suddenly, as we turned our gaze, there was a terrific bang. Everything went bright red, we got stuck, as we pulled ourselves up, our arm touched the red hot steel and we smelt our own flesh burn! Before the pain set in, nausea hit us; than we must have fainted. But not for long. We wanted to get out of that blazing steel coffin! We pushed ourselves up through the hatch, there was not a moment to lose if we were to live! With our last bit of strength we pulled ourselves out and fell gasping onto the ground.

‘Nearby we saw the war going on. Some of the crew bailing out as it exploded in a ball of fire.  Suddenly out of the clouds emerged three twin-engined bombers. The three bombers could now be seen coming down in a shallow dive. They were bombers. We saw explosions erupting in the center of the town our land, several bombs were falling near other areas, and worst of all some fell on children’s playground. Within few minutes, many civilians were martyred, among them many innocent children. We watched this scene as detached as if we were watching a war movie.

From dawn to dusk our town land turned to ashes, we looked all around, all we could see, devestations, dead bodies, infertile land, and ruined houses.

We were shocked, frozen with fear, but then we tried to crawl away from that ghastly scene, repeating to ourselves loudly, “we are strong and we are going to survive, we must live”. But a tear ran down our cheeks, we felt the pain so badly, the pain we couldn’t stand. It made us scream and cry. the last thing we remember is someone calling our names. Our head became heavy and the world turned black.

There was no glamour no light but lots of blood. Scattering all around like a red dust on the ground. Blood it may sounds pathetic, but it is a grim tale, this blood can’t be depicted, but is speaks in silence for those who carefully listens. Blood, a most terrible dealt with, which will remain alive in history.

This is our Balochistan on daily basis, where such barbaric activities are most common and daily routines of forces. Many innocents lose their lives, homes, families, friends and further more. And few offer their lives for its sovereignty, and flag, who fearlessly face the enemy with a stiff upper lip and a reckless disregard for danger.

Former tennis champion and political activist Arthur Ashe once said that ” true heroism is remarkably sober, very dramatic. It is not the urge to surpass all others at whatever cost, but the urge to serve others at whatever cost”.

Balochistan history has witnessed thousands of such lives who embraced martyrdom for the sake of their Nation’s sovereignty. Since Nawab Mehrab khan (1839) upto now many were dipped with blood. They lived in a world that the families and friends they left behind can only begin to imagine, they strangled each things for a purpose to free their nation, and lost their gracious lives in that journey.

Each 13 November at memorials of Balochistan Martyrs, for a little while we walk taller, straighter, and with a sense of pride, remembering our lost minds and visions whose visions are still being taken ahead.

On 13th of November

We remember

Laughter and tears

Foes and enemies

Victories and disappointments

Heroes and martyrs

We remember

Cries and fears

Bravery and courage

We remember

Tales, which are unsaid

Songs, which are unsing

Journey, which is continue until end

Motherland, which is dipped with blood.

We Remember!

Mourns of mothers

Despairs of fathers

Dismays of sisters

We Remember

Heroes and martyrs

Who drawn their last breaths

Gave their life to a beautiful cause

We remember those

Who paved the way

We remember those who stay.

We pay a huge tribute to all the martyrs of Balochistan who are being martyred on daily basis, and 13th of November is the day where we all remember those precious lives.

Tribute to those whose voices we no longer hear,

Tribute to those whose vision we still are privileged to see,

Tribute to those whose dreams are yet to be accomplished.




Letter to Michelle Bachelet-UN high commissioner for human rights about the situation Balochistan




Pamphlet of 11th August, Independence Day of Balochistan

jpg2pdf




Baloch Women are Under Siege

Baloch Women are Under Siege

Balochistan is a colony of State of Pakistan since the day when Pakistan had occupied the Baloch land. The relation between Pakistan and the Baloch people is just of a tyrant and oppressed. Pakistan uses third degree torture on Baloch missing persons, and it has crossed all the limits of atrocities for last two decades, but since last year, Pakistan has changed its policies toward the Baloch Movement and restarted disappearance of Baloch women at a large scale.

Pakistan had begun implementation over its policy of Baloch women abduction in 1973, but the state intensified the enforced disappearance of Baloch women since last year where more than one hundred Baloch women were illegally detained and then disappeared by Pakistan Army from Mashkay Awaran, Bolan, Dera Bugti, Dasht Makran and Rakshan Nagh areas of Balochistan.

In 2017, Pakistan Army conducted a massive operation in Mashkay, Balochistan where the army abducted many women during the operation, in which a woman, Naz Gul, was killed by state forces.

On 4th June 2018, Pakistan Army forcibly shifted dozens of Baloch women in its camp supposedly for aid in Naag Rakhash district Washuk. A pregnant woman faced miscarriage during infliction of torture, and many women are still in the army camps suffering torture physically and mentally.

On June 26, 2018, three more Baloch women, Gull Bano along with her daughter Bibi Ganjal and other women Bibi Saema, were illegally detained from from Jahu area of Awaran during the on-going military operations. The Jahu operation detainees and disappeared persons were then released after the illegal detention of almost two days, but they don’t talk due to extreme fear and psychological distress.
There are many other such cases which couldn’t be public due to suspension of telecommunication system by the Pakistan Army in the operation-hit-areas.

In Balochistan, Baloch women and children have always been affected; they are sometimes physically tortured by state forces during the military operations, or are tortured psychologically when men members of their families go missing. Directly or indirectly, in either case, Baloch women are the victims of state atrocities.

United Nations (UN) Women pledges to protect the right to live for women and girls worldwide in order to end discrimination, violence and poverty, and assure the gender equality.

Pakistan Army is repeating the history of Bangladesh in Balochistan in 21st century, and this pin drop silence of the international community is supporting Pakistani forces in this delict. We urge the international community to take notice of illegal detention of Baloch woman, men and children and intervene in issue of Baloch missing persons to save thousands of lives.




Nukes Ruptured Balochistan

United Nations Office for Disarmament Affairs (UNODA) states that “Nuclear weapons can destroy a whole city, potentially killing millions, and jeopardizing the natural environment and lives of future generations through its long-term catastrophic effects.  The dangers from such weapons arise from their very existence”.
On May 28, 1998, Pakistan tested its nuke on Raskoh, south of the district of Chaghi, Balochistan. After the tests of Pakistan’s dirty nuke, Balochistan experienced a country wide and a massive scale of drought which claimed the lives of millions of livestock. The agriculture sector of the country was badly affected, domestic economy of the people collapsed and many died.
The radiation exposure damages living cells. The destruction of a sufficient number of cells inflicts noticeable harm on organs which results in death. No altered cells repaired in Balochistan and the resulting modification passed on to further cells and they eventually led to cancer.
Cancer is the most deadly disease in the world and Balochistan is very much affected by this disease. The shock waves directly injure humans by rupturing the eardrums and lungs and by hurling people at high speed. Till today, majority of babies not only in Chaghi but in the surrounding areas are born abnormal.
Balochistan’s occupation is an open violation of the Universal Deceleration of Human Rights (UDHR) and the nuclear test on an occupied land is a universal crime. The Senate body briefing on the health and civic facilities in 2018 informed that “in whole Pakistan, 178 women out of 100,000 die during delivery, while in Balochistan the mortality rate is four times higher than the rest of country where 758 women die during delivery.”
Balochistan’s condition is that much worse where human has no source of living. On this worse condition of life in Balochistan, Pakistan had tried its dirty nukes. UN’s institutions and other international human rights institutions also ignored Balochistan.
After the nuclear test, Balochistan faced much difficulty for living a simple life but no human rights researchers came for research and to stand against the human rights violence on the Baloch land.
Balochistan is waiting for the UN and other international institutions to come and intervene in Balochistan, and safe millions of lives of Baloch people.



30th August and Enforced disappearances in Balochistan.

Families of missing persons are protesting

Sagaar editorial :

The General Assembly of United Nations on December 2010 in the resolution 65/209 expressed it’s reservation on enhanced allegedly disappearance from various parts of the world to pronounced a world day for it’s commeration.  From that after 2010, until now every year 30th August is being commerated as globally alleged disappearance day.
This time Balochistan is included from those some regions of entire world which are dangerously inflicted by the incidents of allegedly disappearances.  In fact, alongside others fundamental human rights violations in Balochistan the issue of disappearance persons is not Fresh, however it’s continued from years , which is for sure increasing day by day.
The state Pakistan is using the organized policy of alleged disappearance in order to terrify the Baloch Nation and crush the freedom movement.
In result of this policy till now more than twenty two thousands Baloch have been abducted by state run Institutes and Pakistan army. Among those disappearance persons, Political and Social activists, Journalists, Writers, Students, Teachers and people from all spheres of life are included.
However at other hand , a large number of abducted persons in occupied Balochistan owing to sanctions on media is entirely deprived of coverage.
The problem of missing persons proved dangerous and alarming at the time when in April 2009 the founder leader of BNM, Ghulam Mohammad Baloch along with two companions have been abducted by Pakistan army and intelligence agencies from Turbat, a city of Balochistan and after some days the above mentioned leaders tortured and mutilated dead bodies recovered from a barren place.
After this tragic incident, an unfinished and continous throwing of dead bodies began from entire Balochistan which is still continued.
In effect of Pakistan’s kill and dump policy the land of Balochistan has yet received more than 4 thousands mutilated bodies..
In 2014, in Totak, discovery of unlimited mass Graves and hundreds of tortured and mutilated dead bodies more intensified the doubts of missing persons family.
From that dead bodies a massive number was comprised of those owing to mutilation couldn’t get recognized. State Pakistan didn’t even give permission to the families of missing persons to go for DNA test for that discovered dead bodies and even though not any international organisations given permission regarding this concern. All of the discovered dead bodies under the administration of state forces were thoughtfully buried in an attempt to keep then problem cold down.
In Balochistan from seven decades a national movement is going on, which aims at freeing Balochistan from Pakistan occupation. Despite presence of international laws and organisations, the political movement of Baloch is being forcely pressed by Pakistan on a run to continuously violate the international laws from 1948.
It is a responsibility of people from civil society that for resolving this issue raise your voice, alongside that it is a fundamental responsibility of UNO to keep away it’s members state Pakistan for insincere behaviors and take notice of alarming human rights violations in Balochistan.




کمال بلوچ کا پیغام بلوچ نوجوانوں کے نام 

 ھما کہ راستی ءِ راہ ءَ اِنت۔۔۔ ھما منی سنگت انت
 میرے کاروا ن کے عظیم ساتھیو، بلو چ قومی آزادی کی جد وجہد کس جانب گامزن ہے اور اس میں آپ لو گو ں کا کردار کیا ہے اس سے بلوچستان کا ہر شخص بخوبی آگاہ ہے۔ ہم اپنا کر دار مزید کس طر ح بہتر طریقے سے ادا کرسکتے ہیں، یا ہمیں کس طرح کردار کرنا چاہیے اس بات پر غور کرنے کی ضرورت ہے۔ اس وقت جو تبد یلیاں دنیا میں رونما ہو رہی ہیں اس سے ہمیں با خبر رہنا چا ہیے۔یہ حقیقت ہے کہ طا قتور اور مظلوم کے درمیان جو رشتہ ہے وہ آقا اور غلام کا ہے، اس فلسفے کو سمجھتے ہو ئے ہمیں یہ جاننے میں آسانی ہو تی ہے کہ کیوں بلو چستا ن پر قبضے کے خلا ف آواز بلند کرنے پر ریاست ہمارے خلاف انتقامی کاروائیوں پر اتر آئی ہے۔ ہم آقا اور محکوم کے تفریق کو ختم کرنے کے لئے جدوجہد کررہے ہیں، اس لئے ہمارے لوگ چن چن کر غائب کیے جارہے ہیں اور ہمیں مسخ شدہ لاشیں مل رہی ہیں۔ خاص کر ہر بلوچ طالبعلم کے ذہن میں یہ سوا ل ضرور پیدا ہو نا چاہئے کہ یہ سب کچھ کیو ں اور کس لئے ہو رہا ہے؟ ان سوالوں کے جوابات تاریخ کے صفحات پر موجود ہیں، ہر نوجوان کو ان سوالوں کا جواب تلاش کرنا چاہیے۔ جب ہم تاریخ پر نظر ڈالتے ہیں تو کمزور اور حاکم کے فرق کو ختم کرنے کی جدوجہد کے حوالے سے صفحات کے صفحات بھرے پڑے ملتے ہیں۔ اس میں کوئی حیرانگی کی بات نہیں کہ زندہ رہناالگ بات، محکوم کے مرنے کااختیا ر بھی اس کے اپنے ہا تھ میں نہیں ہو تا ہے۔ بلوچ طالبعلم کی حیثیت سے ہمیں یہ معلوم ہونا چاہیے کہ تا ریخ کو بدلنے والے عظیم انسان عام طرح کے لو گوں میں سے ہوتے ہیں۔کیا معلوم تاریخ میں خود کو سرخرو کرنے کا یہ سہرا کون اپنے سر پر باندھے۔ہم میں سے ہر ایک یہ سو چ لے کامیابی ہم حاصل کرسکتے ہیں،اس کے لئے دن رات ایک کر نے کا جذبہ موجود ہو تو اس بات میں کوئی شبہ نہیں کہ اپنی مقصد میں کامیاب ہوجائیں۔ تاریخ کے اوراق جہد کاروں کو ہمیشہ سنہرے الفاظ میں یاد کرتے ہیں۔
بی ایس او آزاد کے کا رکنان کے ساتھ ہر بلو چ طالب علم پر فر ض بنتا ہے کہ وہ اپنے اند ر قومی جذبہ رکھے۔ کیو نکہ انقلا ب اور تبد یلی لانے والے نوجوان ہی ہو تے ہیں اگر چین، جنوبی کو ریا اور انڈیا کی تاریخ پر نظر ڈا لیں تو نو جو انو ں کا کر دار وہاں نما یا ں نظر آتا ہے۔ بلو چ جد وجہد میں بھی بلوچ طالب علم رہنما ہراول دستے میں موجود ہیں۔ مثال کے طو رپر ڈاکٹر اللہ نظر میر عبدالنبی سمیت دیگر بہت سے کردار ہیں جو آج اہم مقام پر فا ئز ہیں۔اس لئے میں آپ لو گو ں سے یہ عرض کر نا چاہتا ہوں کہ اپنے اندر اتنی مضبو طی پیدا کریں کہ کو ئی طا قت آپ لوگوں کوتقسیم نہ کر سکے، کچھ لوگ بی ایس او کے باقی دھڑوں کی موجودگی کو جواز بنا کر یہ سو چتے ہیں آج ہم کیو ں تقسیم ہیں۔ لیکن میر ے خیال میں یہ تا ریخی حقیقت ہے کہ ہم تقسیم نہیں بلکہ ہم دو مختلف نظر یات کے مالک ہیں۔ یہ نظر یہ بلو چ قومی آزادی اور انقلاب کی ہے دوسر ی سوچ وہی ہے جو پا کستان کے ساتھ رہنے کی حمایتی ہے۔اور یہی نظریہ قومی مفادات کی بجائے انفرادی مفا دات کو ترجیح دیتا ہے۔  ایک تا ریخ کے طالب علم ہو نے کے ناطے میں اُن سے یہ کہناچاہتا ہو ں کہ آپ لوگ غلط سمت پر جا رہے ہیں۔ جو تاریخ اس وقت رقم ہو رہی ہے اس سے آپ لوگو ں کو محروم رکھا گیا ہے، آپ غلط راہ کا انتخاب کر چکے ہیں۔ میں اس تحر یر میں بی ایس او پجا ر بی ایس او مینگل کے کا رکنان کو یہ واضح پیغام دینا چاہتا ہوں کہ وہ حقیقی راہ کا انتخاب کر یں۔ اسی میں بلو چ کی نجا ت اور ہما ری بقا ہے۔ کیو ں ہم تاریخ سے واقفیت کے باوجود تاریخ سے سبق حاصل نہیں کرتے؟ ہر کسی کے اشارے پر ادھر اُدھر دوڑنا شروع کردیتے ہیں۔ آئیں اسی راہ کا انتخاب کریں جس سے آزادی کے منزل تک پہنچا جا سکتا ہے، جہاں آزاد وطن و ریاست کے مالک بلو چ عوام رہیں۔ کم از کم اپنے اندر اس بحث کا آغا ز تو کر یں۔ آپ لو گو ں کے ذہن میں یہ بات ڈالی جا چکی ہے کہ بی ایس او آزاد نے غلط راستے کا انتخاب کیا ہے،یہ اس لئے کہا جا رہا ہے کیوں کہ بی ا یس او آزاد تاریخ کا درس دیتی ہے، بی ایس او آزاد اپنے حق پر بات کرنے کادرس دیتی ہے، بی ایس او آزاد کتاب اور قلم کی بات کر تی ہے۔اگر یہ درس غلط ہے تو پھر ہر وہ جہد کار غلط ہے جس نے آزادی کی جدوجہد کی اور ہر وہ حق گو غلط ہے جو حق بات کہنے کی جرات کرتا ہے۔ اگر قومی خوشحالی کی بات کرنا غداری ہے تو مجھ سمیت بی ایس او آزاد کا ہر کارکن غدار ہے۔ ہر بلوچ طالبعلم کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ اِس طرز کے منفی پروپگنڈوں کوناکام بنانے کی بھر پور کوشش کرے۔
ممکن ہے کہ کچھ دوست یہ سوچ رہے ہیں کہ کیوں بی ایس او کی لیڈر شپ پہلے کی طرح میڈیا میں نظر نہیں آتی ہے۔ میرے خیال میں یہ سوچ ایک مفروضہ ہے،ہم اپنے کا رکنان کیساتھ ہر وقت بحث مباحثوں میں ایک ساتھ ہیں ہم جہا ں کہیں بھی ہو ں ہر وقت ہم اپنے کا رکنوں کے ہمراہ ہیں اپنی تقریروں، پروگراموں اور تحر یو ں کی شکل میں ہم ایک ساتھ ہیں۔
 بی ایس او آزاد کے کا رکنو! آج بلو چستان کے حالات کس نہج پر ہیں اس سے آپ لو گ بخوبی باخبر ہیں۔ سیاسی معاملات کا مطالعہ کرنے کے ساتھ آپ ذرائع ابلاغ سے روز خبریں سنتے اور دیکھتے ہیں۔اسی لیئے بلو چستان کیلئے قابض حکمران کی پالیسیاں عالمی برادری یا کسی بھی بیرونی ادارے سے زیادہ آپ لو گو ں پر واضح ہیں۔ اگر آپ قبضہ گیر کی تماتر تر پالیسیوں کا بغور مطالعہ کریں تو آپ بخوبی اندازہ ہو جائے گاکہ ریاست اپنے استعماری مفادات کے حصول کیلئے کس حد تک متحرک ہے۔آج پاکستان اپنے استحصالی پروجیکٹس کی تکمیل کیلئے مختلف قسم کے حربوں کے ساتھ منفی پروپگنڈے بھی کر رہا ہے۔
اگر دیکھا جائے تو اس وقت ریاست کی پوری توجہ گوادرپورٹ کی تعمیر میں ہے۔ایک طرف تو ریاستی میڈیا پورٹ کے نام نہاد فائدے لوگوں کو بتارہی ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ یہا ں لو گو ں کو زندہ رہنے کیلئے پینے کاپانی تک دستیا ب نہیں ہے۔ تو کیا یہ بات سمجھنے کیلئے کا فی نہیں ہے کہ طاقتور کس طرح جھوٹ کا سہارا لیکر اپنے منصوبوں کو تکمیل تک پہنچانا چاہتی ہے۔لہذا اس دور کے تعلیم یا فتہ نوجوان جو تحقیق پر بھروسہ کرتے ہیں وہ تحقیق کر یں اور وہ بیما ری نکال باہر کر یں جو قومی صحت کیلئے نقصان دہ ہے۔ کہنے کامقصد آسان الفاظ میں آقا اور غلام کے رشتے کو جانناچاہئے کہ وہ رشتہ کیا ہے۔ بطور معاشرے کے زمہ دار طبقہ آج جو ذمہ داری ہم پر عائد ہے، یا جوذمہ داری ہم نے لی ہے، کیا ان پر ہم پو را اُتررہے ہیں؟ میر ے خیا ل میں جو محنت آپ لوگ کر رہے ہیں اس سے پو ری دنیا آگا ہ ہے۔ مگر اس خوش فہمی میں نہیں رہنا چاہیے کہ ہم منطقی منزل تک پہنچ چکے ہیں۔
بی ایس او آزادہزار مشکلات کے باجو د بھی اپنے پیغامات دنیا تک پہنچا رہی ہے۔سالوں سے بی ایس او آزادکے کا رکنان اور لیڈران کو پاکستانی فوج چن چن کر اغو ا کر کے قتل کررہی ہے۔لیکن اسکے باوجود ہما ری تنظیم کے کارکنان کے پاؤں میں لرزش تک نہیں آئی ہے۔ بلکہ اپنے کام میں مزید بہتری لا رہے ہیں۔ سرگرمیوں کو سر انجام دینے کیلئے ہما رے کارکن دن رات محنت کر رہے ہیں جو قابل ستائش ہے۔ جو سیا سی پر ورش آپ لوگوں کی اس پلیٹ فا رم پر ہو رہی ہے اس کا مقصد بلو چ نو جو انو ں میں سیاسی شعور پید اکر نا ہے، حق اور سچ کی راہ دکھا نا ہے تاکہ یہ آگاہی تمام بلوچ سماج اور نوجوانوں میں آ سکے۔ مستقبل کی رہنما آپ لو گ ہیں اگر اپنے مستقبل کیلئے فکر مند ہیں تو آج آپکو لازماََ جدوجہد کرنا ہوگی۔اس وقت بلو چ جنگی اور انقلا بی حالات سے گزر رہی ہے اس نازک صورت حال کو سمجھنے کی ضرورت ہے کہ کس طرح کی پالیسیاں تشکیل دینی چاہیے۔
بلوچستان میں نظام تعلیم ایک الگ بحث ہے کہ بلوچو ں کیلئے تعلیم کا دروازہ قبضہ کے پہلے دن سے بند رہا ہے۔اسی وجہ سے بلوچستان کے اکثر علا قوں میں پر ائمری تعلیمی ادارے ہی نہیں ہیں تو نوجوان کس طرح یورنیو رسٹیز جا سکیں گے۔ بیشتر اسکولوں میں پا کستان پرست نیشنل پارٹی اور دیگر پارلیمانی جماعتوں کے سفارشی بھر تی کیے ہوئے ٹیچرز تعینات ہیں۔ اس طرح کی مثالیں بلو چستان کے طول و عرض میں موجود ہیں۔ کہنے کا کا مقصد یہ ہے کہ ریا ست کبھی بھی یہ نہیں چاہتی ہے کہ بلوچ معیاری تعلیم حاصل کر یں۔بلکہ وہ بلوچوں کو جاہل رکھ کر صدیوں پیچھے دھکیلنا چاہتا ہے۔بلوچوں نے ماضی میں جس طرح ہر چیلنج کا سامنا کیا اور سرخرو رہے ہیں، اسی طرح آج کے زمانے کے چیلنجز کا سامنا کرکے بلوچ سرخرو نکلیں گے۔
تعلیم کا معیار پا کستان کی تعلیمی اداروں میں ہمیشہ نیچے ہی رہا ہے۔ اُس کے دانشوار خود اس با ت کو تسلیم کر تے ہیں کہ یہا ں سیا سی معاشی بحران کے ساتھ ساتھ اخلاقی بحران بھی اپنے عروج پر ہے۔ان تما م حالات کاجا ئز ہ لیں تو پاکستان کی اجتماعی صورت حال کو سمجھنا ہمارے لئے آسان ہوگا۔ چوں کہ پاکستان کی تشکیل قومی بنیادوں پر نہیں بلکہ مسلم بھائی چارگی کے نام نہاد نظریے کی تحت پر ہوئی ہے۔)یہاں اس بات کی وضاحت کرنا ضروری ہے کہ مختلف قومیتوں کے تشخص کو ختم کرکے انہیں مذہب کے نام پر یکجا کرنے کی دلیل کمزور ترین دلیل ہے(۔ اسی لئے آج ایک مخصوص طبقے کے علاوہ عام سندھی، پنجابی، پشتون اور دیگر قومیتیں بھی معاشی، سیاسی، ثقافتی استحصال کا شکار ہیں۔ اُن قوموں کو بلوچوں کی جدوجہد سے رہنمائی حاصل کرنا چاہیے۔ کیونکہ بلوچوں نے  ایک کٹھن راستے کا اتخاب ایک عظیم مستقبل کیلئے کیا ہے۔
ریاست کے نام نہاد د دانشور بلوچ قومی جد وجہد پر انتہائی منفی پر وپیگنڈا کر کے اسے غلط ثابت کر نے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ دوسری طرف پاکستان پر ست پا رٹیو ں کی جانب سے یہ پروپگنڈا رعام ہے کہ بلو چ خا نہ جنگی کا شکار ہیں۔وہ یہ بات ہر خاص و عام کو باور کرانا چاہتے ہیں کہ بلوچستان خانہ جنگی کا شکار ہے۔ مگر اس طرح کے خیالات حقیقت سے کو سوں دور محض اندازے ہیں۔ اس طرح کی باتیں پھیلانے کا بنیادی مقصد بلو چ تحر یک کو ختم کر نے کی ایک ناکام کوشش ہے۔ سیاسی کارکن ہونے کے ناطے ہمارے لئے ضروری ٹھرتا ہے کہ دشمن کے ہر منفی پروپگنڈے کو ناکام بناتے ہوئے تمام تر سیاسی تقاضوں، حقائق، کمزوریوں اور تغیرات کو مد نظر رکھ کر قومی آزادی کی جدو جہد میں بہتر سے بہتر کردار ادا کریں۔  ان معاملات کو سمجھنے اور ان مسائل کو حل کرنے میں دنیا کے تحریکوں اور اقوام کی تاریخ بہترین رہنماء ہے۔



چیئرمین زاہد بلوچ کی گمشدگی کے تین سال




بی ایس او آزاد نا کنڈان جھالاوان نا مختلف شار تیٹی پمفلٹ (ریاست نا مردم شماری وبلوچ قوم نا مچا زند نا سوج) بشخ کننگا




Bso Azad – London Zone Leaflets